1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

فلسطينی اسرائيل سے مذاکرات پر تيار، ليکن بلا شرط نہيں

فلسطينی صدر محمود عباس نے امريکی وزير دفاع ليون پنيٹا سے بات چيت کے دوران امريکہ سے اپيل کی ہے کہ وہ سلامتی کونسل ميں فلسطين کی اقوام متحدہ کی مکمل رکنيت کی قرار داد کے خلاف اپنے ويٹو کے حق کا استعمال نہ کرے۔

امريکی وزير دفاع ليون پنيٹا

امريکی وزير دفاع ليون پنيٹا

فلسطينی صدر محمود عباس نے کہا ہے کہ اقوام متحدہ کی فلسطينی رکنيت قيام امن کے عمل ميں رکاوٹ نہيں بنے گی۔

امريکہ کی اوباما انتظاميہ ايک آزادفلسطينی رياست کی اقوام متحدہ کی رکنيت کی قرارداد کو سلامتی کونسل ميں ويٹو نہ کرنے کی فلسطينيوں کی اپيل کو رد کرچکی ہے۔ اس کا مطالبہ ہے کہ فلسطينی کسی قسم کی پيشگی شرائط رکھے بغير سب سے پہلے براہ راست اسرائيل سے مذاکرات کريں۔ ليکن فلسطينی اپنی پيشگی شرائط پر جمے ہوئے ہيں، جيسا کہ پی ايل او کی انتظامی کميٹی کے رکن صالح رفاد نے کہا: ’’فلسطينيوں کا مطالبہ ہے کہ اسرائيلی حکومت، خاص طور پر مقبوضہ مشرقی يروشلم ميں ہرشکل ميں يہودی بستيوں کی تعمير روک دے۔ اس کے علاوہ اسرائيلی حکومت سرکاری طور پر يہ اعلان کرے کہ وہ سن 1967 کی جنگ سے پہلے کی سرحدوں کو اور بين الاقوامی قانون کی حاکميت اور اختيار کو بھی تسليم کرتی ہے۔‘‘

فلسطينی صدر عباس سکريٹری جنرل بان کی مون کو ايک خط دے رہے ہيں، جس ميں فلسطين کو ايک ملک کی حيثيت سے تسليم کرنے کی درخواست کی گئی ہے

فلسطينی صدر عباس سکريٹری جنرل بان کی مون کو ايک خط دے رہے ہيں، جس ميں فلسطين کو ايک ملک کی حيثيت سے تسليم کرنے کی درخواست کی گئی ہے

اس سے پہلے اسرائيلی وزير دفاع ايہود باراک نے امريکی وزير دفاع ليون پنيٹا سے بات چيت کے بعد کہا کہ اسرائيل کو فلسطينيوں سے مذاکرات دوبارہ شروع کرنے اور علاقے ميں اپنے ہمسايوں کے ساتھ کشيدگی دور کرنے کے ليے کوئی راہ تلاش کرنا ہو گی۔

پنيٹا نے وزير دفاع کا عہدہ سنبھالنے کے بعد پہلی مرتبہ اسرائيل کا دورہ کرتے ہوئے يہ بھی کہا کہ فلسطينيوں اور اسرائيل کو لمبے عرصے سے رکے ہوئے مذاکرات دوبارہ شروع کرنا چاہئيں۔ انہوں نے ايہود باراک کے ساتھ ايک نيوز کانفرنس ميں کہا کہ دونوں فريقوں کی طرف سے دو رياستی حل کے ليے مذاکرات ميں ايک بہادرانہ قدم اٹھانے کا وقت آ گيا ہے۔

اسرائيلی وزير دفاع نے صرف ايک عمومی سمجھوتے کی پيشکش کی۔ انہوں نے اس بارے ميں کوئی وعدہ نہيں کيا کہ اسرائيل يہودی بستيوں کی تعمير کے سلسلے ميں بہتر رويہ اختيارکرے گا۔ اسرائيل غزہ اور مشرقی يروشلم ميں يہودی بستيوں کی تعمير جاری رکھے ہوئے ہے، جہاں يہودی آباد کاروں کی تعداد اب پانچ لاکھ تک پہنچ چکی ہے۔

فلسطينيوں کے ايک مظاہرے ميں پوسٹر

فلسطينيوں کے ايک مظاہرے ميں پوسٹر

اسرائيلی وزير اعظم نيتن ياہو نے دورے پر آئے ہوئے امريکی وزير دفاع پنيٹا سے کہا کہ وہ فلسطينی صدر محمود عباس کو شرائط رکھے بغير براہ راست اسرائيل سے مذاکرات پرآمادہ کريں۔ِ

سينئر فلسطينی عہديدار صائب ايرکات نے بتايا کہ فلسطينی صدر محمود عباس نے پنيٹا سے ملاقات کے دوران اُنہيں بتا ديا کہ اگر اسرائيل يہودی بیستياں آباد کرنے کے عمل کو روک دے اور سن 1967 کی سرحدوں کے مطابق حل سے متفق ہو جائے تو فلسطينی مذاکرات دوبارہ شروع کرنے پر تيار ہيں۔

رپورٹ: عبدالکريم سمارا، ڈوئچے ويلے عربی سروس / شہاب احمد صديقی

ادارت: امجد علی   

 

DW.COM