1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

فضائی حملے کے لیے پاکستان کی رضامندی حاصل کی گئی، وال اسٹریٹ جرنل

ایک رپورٹ کے مطابق نیٹو کے اُس فضائی حملے کے لیے پاکستانی اہلکاروں کی رضا مندی حاصل کی گئی تھی، جس کے نتیجے میں 24 پاکستانی فوجی ہلاک ہو گئے تھے تاہم شاید انہیں یہ معلوم نہیں تھا کہ ان کے اپنے فوجی وہاں موجود ہیں۔

default

یہ رپورٹ اس واقعے کی ابتدائی تحقیقات سے متعلق بریفنگ میں شرکت کرنے والے امریکی اہلکاروں کے حوالے سے مؤقر امریکی جریدے وال اسٹریٹ جرنل میں شائع ہوئی ہے۔

اہلکاروں نے جریدے کو بتایا کہ افغان فوج کی قیادت میں سرگرمِ عمل فورس، جس میں امریکی کمانڈوز بھی شامل تھے، افغانستان اور پاکستان کی سرحد کے نزدیک طالبان جنگجوؤں کا تعاقب کر رہی تھی کہ اچانک ان پر فائرنگ شروع ہو گئی۔ انہوں نے یہ خیال کیا کہ یہ فائرنگ عسکریت پسندوں کے کسی ٹھکانے سے کی جا رہی ہے۔

Nato Beschuss Pakistan

رپورٹ کے مطابق چوبیس فوجیوں کی ہلاکت کا باعث بننے والے فضائی حملے کے لیے پاکستان سے رضامندی حاصل کی گئی تھی

اس پر انہوں نے فضائی مدد طلب کرنے سے پہلے ایک مشترکہ کمانڈ اور کنٹرول سینٹر سے بھی رابطہ کیا، جس میں امریکی، افغان اور پاکستانی فوجی تعینات تھے۔ وہاں موجود پاکستانی نمائندوں نے کہا کہ اس علاقے میں کوئی دوستانہ فورسز موجود نہیں ہیں اور یوں فضائی حملے کی راہ ہموار ہو گئی۔

تاہم اہلکاروں نے دونوں جانب سے ہونے والی غلطیوں کا اعتراف کیا۔ ایک اہلکار نے وال اسٹریٹ جرنل سے گفتگو میں کہا، ’’بہت سی غلطیاں ہوئی ہیں۔ موقع کے بارے میں کچھ زیادہ آگاہی نہیں تھی کہ وہاں اُس وقت کون موجود تھا اور کیا کر رہا تھا۔‘‘

انہوں نے اس بارے میں بھی خبردار کیا کہ یہ بیان اس حملے میں شامل کمانڈوز کے ابتدائی انٹرویوز پر مشتمل ہے اور مزید تفصیلات سامنے آنے کے بعد یہ تبدیل بھی ہو سکتا ہے۔

پینٹا گون کا اصرار ہے کہ پاکستانی فورسز پر جان بوجھ کر حملہ نہیں کیا گیا تاہم امریکی حکام نے اس واقعے پر کوئی معذرت بھی نہیں کی ہے۔

Nach der Schließung zweier Grenzübergänge zwischen Pakistan und Afghanistan

پاکستان نے اس حملے پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے افغانستان میں نیٹو فورسز کو رسد کی ترسیل روک دی

پاکستان کا مؤقف ہے کہ اس کے فوجیوں پر ہونے والا حملہ ایک بلا اشتعال کی جانے والی کارروائی تھی اور امریکیوں سے اس پر احتجاج کرنے کے باوجود یہ کارروائی دو گھنٹے تک جاری رہی۔

دہشت گردی کے خلاف جنگ میں شامل ان دو اہم اتحادی ملکوں کے درمیان تعلقات میں کافی عرصے سے کشیدگی چلی آ رہی ہے اور واشنگٹن کا الزام ہے کہ پاکستان کی فوج اور انٹیلیجنس سروسز کے بعض عناصر کا طالبان اور دیگر اسلامی انتہا پسندوں کے ساتھ گٹھ جوڑ ہے۔

رپورٹ: حماد کیانی / خبر رساں ادارے

ادارت: امجد علی

DW.COM