1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

فضائی حملوں کی تحقیقات میں پاکستان تعاون نہیں کر رہا، پینٹاگون

پینٹا گون کے مطابق پاکستان مہمند ایجسنی میں نیٹو کی فضائی کارروائی کے بارے میں امریکی فوجی تحقیقات کا حصہ بننے سے انکار کر رہا ہے۔ دریں اثناء پاکستانی سرحدی افواج کو جوابی حملے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

default

پینٹا گون کی طرف سے جمعہ کو جاری کیے گئے ایک بیان کے مطابق پاکستانی حکومت اُس امریکی تحقیقاتی ٹیم کے ساتھ تعاون کرنے پر رضامند نہیں ہے، جو مہمند ایجسنی میں واقع دو سرحدی چوکیوں پر نیٹو کے فضائی حملوں کے بارے میں حقائق اکٹھا کر رہی ہے۔ پاکستانی فوج کے مطابق گزشتہ ہفتہ کے روز کیے گئے اس حملے میں اس کے چوبیس فوجی مارے گئے تھے۔

پینٹا گون کے ترجمان جارج لِٹل کے بقول اسلام آباد حکومت سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ اس افسوسناک واقعے کے بارے میں حقائق جمع کرنے کے لیے امریکی تفتیشی ٹیم کا ساتھ دے تاہم اسلام آباد نے ابھی تک اس کا کوئی جواب نہیں دیا، ’ہم اس حوالے سے پاکستانی حکام کے تعاون کو خوش آمدید کہیں گے‘۔

Nach der Schließung zweier Grenzübergänge zwischen Pakistan und Afghanistan

پاکستانی حکام نے ان حملوں کے بعد افغانستان میں تعینات امریکی افواج کی رسد روک دی ہے

اس سے پہلے امریکی جریدے وال اسٹریٹ جرنل کی ایک رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ پاکستانی فوج نے اس حملے کی اجازت دی تھی۔ اس رپورٹ کے مطابق پاکستانی فوج کو علم نہیں تھا کہ اس علاقے میں پاکستانی فوجی موجود ہیں۔ تاہم جمعہ کو پینٹاگون میں ہونے والی ایک پریس کانفرنس کے دوران امریکی افواج کے ترجمان جان کیربی نے اس رپورٹ کی تصدیق یا تردید نہیں کی۔ پاکستان نے ان خبروں کو مسترد کر دیا ہے۔

خبر ایجنسی روئٹرز نے پاکستانی فوجی ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ پاکستانی فوج نے نیٹو کو حملے کے لیے کوئی گرین سگنل نہیں دیا تھا۔

ایک اور پیشرفت میں پاکستانی افواج کے سربراہ جنرل اشفاق پرویز کیانی نے قومی سرحدی علاقوں میں تعینات ملکی سکیورٹی دستوں کے کمانڈرز کو اجازت دے دی ہے کہ وہ مستقبل میں ایسے کسی ممکنہ حملے کی صورت میں جوابی کارروائی ضرور کریں۔ پاکستانی ذرائع ابلاغ کے مطابق اس اجازت کے بعد اب پاکستانی فوجیوں کو مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کی طرف سے کسی بھی ممکنہ حملے کی صورت میں پہلے اعلیٰ فوجی قیادت سے اجازت لینے کی ضرورت نہیں ہو گی۔

اس واقعے کے بعد سے امریکہ اور پاکستان کے مابین پہلے سے کشیدہ تعلقات میں مزید تناؤ نمایاں ہو چکا ہے۔ اس کی ایک تازہ مثال پاکستان کا افغانستان کے بارے میں جرمن شہر بون میں پیر کو ہونے والی بین الاقوامی کانفرنس میں شرکت سے انکار ہے۔ جمعہ کو پاکستانی وزیر خارجہ حنا ربانی کھر نے کہا کہ بون کانفرنس میں شرکت نہ کرنے کا پاکستانی فیصلہ اٹل ہے۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس