فرانس یورپ میں دہشت گردی کا مرکز کیوں؟ | حالات حاضرہ | DW | 15.07.2016
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

فرانس یورپ میں دہشت گردی کا مرکز کیوں؟

فرانس کچھ عرصے سے دہشت گردوں کی بہیمانہ کارروائیوں کا ہدف بنا ہوا ہے۔ جمعرات کو نیس میں ہونے والے دہشت گردانہ واقعے کے تناظر میں تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ دہشت گردوں کے لیے ’نرم اہداف کو نشانہ بنانا‘ مشکل کام نہیں۔

فرانس کا شمار دنیا کے اُن ممالک میں ہوتا ہے جہاں کا سفر سب سے زیادہ کیا جاتا ہے۔ ایسے ملک کو پے در پے دہشت گردانہ کارروائیوں کا نشانہ بنانا بہت ہی منظم اور اثر و رسوخ کے اعتبار سے غیر معمولی طور پر مضبوط تنظیم کا ہی کام ہو سکتا ہے۔

جمعرات کی شب فرانس کے جنوبی شہر نِیس میں قومی دن کی تقریبات کے موقع پر ایک تیز رفتار ٹرک سے ایک ہجوم کو کچل دیے جانے کی دہشت گردانہ کارروائی، جس کے نتیجے میں 84 افراد ہلاک ہو گئے، کے پیچھے کارفرما عناصر کے بارے میں بین الاقوامی مبصر اور تجزیہ نگار وں کی رائے سامنے آ رہی ہے۔

Frankreich Terroranschlag in Nizza

نیس میں ایک تیز رفتار ٹرک سے ایک ہجوم کو کچل دیے جانے کی دہشت گردانہ کارروائی کے نتیجے میں 84 افراد ہلاک ہو ئے ہیں

فرانس کو مغربی فلسفے کا گہوارہ سمجھا جاتا ہے۔ آسٹریلیا میں قائم انٹر نیشنل ٹیرراِزم تھنک ٹینک ’انٹیلیجنس رسکس‘ کے چیف ایگزیکٹیو نیل فیرگُس کے مطابق فرانس آئی ایس کے دہشت گردانہ حملوں کا مرکزی ہدف اس لیے بنا ہے کہ یہ ملک آزادی، مساوات اور سماجی اقدار کے چراغ راہ کی سی حیثیت رکھتا ہے۔ کئی دیگر تجزیہ کاروں کی طرح نیل کا بھی یہی کہنا ہے کہ شام اور عراق میں داعش یا آئی ایس کے خلاف جنگ میں فرانس کی شمولیت کی وجہ سے بھی فرانس دہشت گردوں کے نشانے پر ہے۔ ابھی حال ہی میں فرانسیسی صدر نے اپنا ایئر کرافٹ کیریئر ’چارلس ڈیگال‘ کو عراق اور شام بھیجنے کی بات کی تھی تاکہ وہاں ’اسلامک اسٹیٹ‘ کے جنگجوؤں کے خلاف امریکی قیادت میں جاری فوجی آپریشن کو تقویت ملے۔

ابھی تک کسی نے نیس میں ہونے والی دہشت گردانہ کارروائی کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے تاہم ماہرین کا کہنا ہے کہ بظاہر اس واقعے میں ’دولتِ اسلامیہ‘ یا داعش کی طرز کے حملوں کی تمام علامات پائی جاتی ہیں۔ فرانس میں جہادیوں کے حملوں کا سلسلہ 90 کی دہائی سے شروع ہوا۔ اُس وقت فرانس میں سرگرم ’آرمڈ اسلامک گروپ‘ یا AIG نے فرانس کے میٹرو ریلوے سسٹم پر حملہ کیا تھا۔ اس حملے بھی الجزائر سے تعلق رکھنے والے مسلم عسکریت پسند شامل تھے۔ دیگر ممالک کے علاوہ تیونس، الجزائر اور مراکش جیسے شمالی افریقی ممالک بھی فرانس کی نو آبادیوں میں شامل تھے۔ گزشتہ کئی عشروں سے انہی ممالک کے مسلم تارکین وطن فرانس آ کر آباد تو ہوئے تاہم نہ تو انہوں نے خود کو فرانسیسی معاشرے میں مکمل طور پر ضم کیا نہ ہی فرانسیسی حکومت نے انہیں انضمام کے مکمل مواقع فراہم کیے۔ یہ تارکین وطن فرانس میں ’گیٹوز‘ میں رہتے ہیں اور انہوں نے ایک متوازی معاشرہ بنا رکھا ہے۔

Frankreich Terroranschläge Polizei

فرانس میں تین روز کا سوگ اور ایمرجنسی کی مدت میں تین ماہ کی توسیع

نیل فیرگُس کے مطابق فرانسیسی حکام انسداد دہشت گردی کی اپنی مہم کے سلسلے میں پیرس اور اس کے ارد گرد 150 سے زائد کیسوں کی چھان بین کر رہے ہیں۔ فیرگُس، جو فرانسیسی حکام کے ساتھ مل کر پیرس کی ’سیفٹی اینڈ سکیورٹی‘ کے بارے میں کام کر رہے ہیں، نے ایک آسٹرین ویب سائٹ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا، ’’عراق کے موصل اور فلوجا جیسے اہم علاقوں میں داعش کو جو فوجی شکست ہوئی ہے، اور مستقبل قریب میں مزید ہوگی، اُس کا نتیجہ یہ ہے کہ ’اسلامک اسٹیٹ‘ کے جنگجو دنیا بھر میں پھیلتے جا رہے ہیں جس کے باعث دنیا کو مستقبل میں مزید دہشت گردانہ حملوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔‘‘

نیل فیرگُس نے نیس کے حملے کے بارے میں کہا،''حملوں کی موجودہ لہر کی حوصلہ افزائی شامی شہر الرقہ میں سرگرم النصرہ فرنٹ کی قیادت کی طرف سے کی گئی ہے۔‘‘