1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

فرانسیسی عدالت نے ’جنگل‘ کا انہدام روکنے کی درخواست مسترد کر دی

فرانس کا کہنا ہے کہ ساحلی شہر کَیلے کے قریب واقع جنگل نامی مہاجر بستی کے انہدام کے خلاف فلاحی اداروں کی عدالت میں دائر درخواست مسترد ہونے کے تناظر میں اِس مہاجر کیمپ کو چند روز کے اندر ختم کر دیا جائے گا۔

Frankreich | Das Flüchtlingslager Calais kurz vor der Schließung - erste Flüchtlinge verlassen den Jungle (REUTERS/P. Rosignol)

فرانسیسی حکومت کا کہنا ہے کہ جنگل کیمپ کو چند روز میں منہدم کر دیا جائے گا

فرانسیسی وزیرِ داخلہ برنارڈ کازینیو نے بروز منگل اٹھارہ اکتوبر کو ملکی پارلیمنٹ میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’جنگل‘ کے مہاجر کیمپ میں مقیم سینکڑوں تنہا بچوں میں سے چند کو برطانیہ روانہ کرنے کے حوالے سے لندن حکومت کے ساتھ مذاکرات مثبت انداز میں جاری ہیں۔ یاد رہے کہ جنگل میں مقیم متعدد بچے ایسے ہیں جن کے خاندان برطانیہ میں ہیں اور یہ بچے اپنے رشتہ داروں کے پاس جانا چاہتے ہیں۔

پیر سترہ اکتوبر کو بھی چودہ کم عمر بچوں کا ایک گروپ برطانیہ پہنچا تھا جبکہ مزید درجنوں بچے آنے والے دنوں میں جنگل کیمپ سےبرطانیہ روانہ کیے جائیں گے۔ کازینیو نے اس عزم کا اظہار بھی کیا کہ جنگل کیمپ کے انہدام کے بعد سرکاری اعداد و شمار کے مطابق یہاں مقیم پانچ ہزار سات سو پناہ گزینوں کو مناسب اور بہتر رہائش دی جائے گی۔

Frankreich | Das Flüchtlingslager Calais kurz vor der Schließung - erste Flüchtlinge verlassen den Jungle (Getty Images/D. Kitwood)

پیر سترہ اکتوبر کو بھی چودہ کم عمر بچوں کا ایک گروپ برطانیہ پہنچا تھا

اس سے قبل منگل اٹھارہ اکتوبر کو فرانسیسی فلاحی اداروں کی جانب سے جنگل کے انہدام کے خلاف دائر درخواست ایک عدالت نے مسترد کر دی تھی۔ خبر رساں ادارے اے ایف پی کو متعدد ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ بستی کے انہدام کا آغاز آئندہ ہفتے میں ممکن ہے۔

خیال کیا جاتا ہے کہ جنگل کیمپ کے ڈھائے جانے سے فرانس کی سوشلسٹ حکومت کی پریشانی کا خاتمہ ہونے کے علاوہ ٹرک ڈرائیورز اور پورٹ آپریٹرز  بھی اطمینان کا سانس لیں گے۔ فرانس اور برطانیہ کو ملانے والی زیر سمندر سرنگ فرانسیسی شہر کَیلے کے قریب سے گزرتی ہے اور اِس علاقے میں مقیم مہاجرین غیرقانونی طور پر سرنگ پار کر کے برطانیہ میں داخل ہونا کوششیں کرتے رہے ہیں۔ کئی مرتبہ ٹرکوں اور دیگر گاڑیوں میں چھپ کر برطانیہ جانے کی کوشش میں متعدد تارکین وطن کی ہلاکتیں بھی ہوئی ہیں۔