1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

فرانسيسی ماہی گير انسانی اسمگلنگ کے شبے پر گرفتار

مہاجرين کو غير قانونی طور پر فرانس سے برطانيہ پہنچانے کے الزام ميں ايک ماہی گير کو پانچ ديگر افراد کے ہمراہ حراست ميں لے ليا گيا ہے۔ اس گرفتاری کی تصدیق فرانسيسی عدليہ کے ايک اہلکار نے کی ہے۔

فرانسيسی شہر لِيل سے موصولہ نيوز ايجنسی اے ايف پی کی رپورٹوں کے مطابق بيس برس کے لگ بھگ عمر والے اس نوجوان ماہی گير کو پير کی شب دو ويت نامی اور  تین البانوی شہريوں کے ہمراہ ڈنکرک کے بندرگاہی شہر سے حراست ميں ليا گيا۔ عدليہ کے ذریعے نے بتايا، ’’يہ ماہی گير گزشتہ کچھ ماہ سے مہاجرين کو برطانيہ اسمگل کر رہا ہے، جس کے ليے وہ اپنی ہوا والی کشتی استعمال کرتا ہے۔‘‘ مزيد يہ کہ وہ فی کس مہاجر سے فرانس اور برطانيہ کے درميان حائل سمندر یعنی انگلش چينل کو عبور کرنے کے دس سے بارہ ہزار يورو وصول کرتا تھا۔ يہ ماہی گير رات کی تاريکی ميں ڈنکرک کے ساحل سے مہاجرين کو اپنی کشتی ميں بٹھا کر نوے کلوميٹر کا خطرناک راستہ طے کرتے ہوئے برطانوی سرزمين پر پہنچاتا تھا۔

اطلاعات کے مطابق گرفتاری کے وقت اس ماہی گیر کے قبضے سے پولیس کو بھاری رقم بھی دستیاب ہوئی۔ فرانسيسی وزير داخلہ برنارڈ کازینیو نے يورپ ون نامی ايک ريڈيو اسٹيشن پر بات کرتے ہوئے اس گرفتاری کی تصديق کی ہے تاہم انہوں نے مزيد کہا کہ اس بارے ميں مزيد بات چيت قبل از وقت ہو گی۔ انہوں نے بتايا، ’’ہم اس سال کے آغاز سے اب تک انسانی اسمگلروں کے متعدد نيٹ ورکس کو ان کے انجام تک پہنچا چکے ہيں۔‘‘

فرانسيسی وزير داخلہ کے بقول اس وقت فرانس ميں دو سو نيٹ ورکس کے قريب تين ہزار ارکان اِس گھناؤنے کاروبار ميں ملوث ہيں اور انہيں کڑی سزا دينے کی ضرورت ہے۔ رواں برس فرانس پہنچنے والے تارکين وطن کی تعداد پڑوسی ملک جرمنی کے مقابلے ميں کافی کم ہے تاہم ہزارہا افراد برطانيہ تک پہنچنے کے ليے فرانس سے ہی گزرتے ہيں۔