1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

غزہ کے لئے لیبیا کی امداد اب زمینی راستے سے

غزہ پٹی کے لئے امدادی سامان لے کر جانے والا لیبیا کا مال بردار بحری جہاز بحیرہء روم کے علاقے میں کئی روزہ سفر کے بعد اب مصر میں العارش کی بندرگاہ میں لنگر انداز ہو گیا ہے۔

default

لیبیا کا مال بردار بحری جہاز اب مصر میں لنگر انداز ہو گیا ہے

مصری حکام کے علاوہ اسرائیلی ذرائع ابلاغ نے بھی اس بحری جہاز کے العارش پورٹ میں لنگر انداز ہونے کی تصدیق کر دی ہے۔ ایک کارگو شپ کے طور پر مالدووا میں رجسٹرڈ ’امالتھیا‘ نامی یہ بحری جہاز لیبیا میں قذافی فاؤنڈیشن کی طرف سے مہیا کردہ قریب دو ہزار ٹن اشیائے خوراک اور ضروری ادویات لے کر غزہ پٹی کے محاصرہ شدہ فلسطینی ساحلی علاقے تک پہنچنا چاہتا تھا مگر اسرئیلی جنگی جہازوں نے اسے غزہ کی بحری ناکہ بندی کی خلاف ورزی کرنے کے الزام کے تحت روک دیا تھا۔

Gazastreifen / Libyen / Gaddafi

ایک فلسطینی لڑکا لیبیا کے صدر معمر قذافی کا پوسٹر اپنے ہاتھوں میں لئے

کئی روز تک کھلے سمندر میں سفر کرنے والے اس جہاز کے بارے میں گزشتہ چند دنوں سے یہ بھی واضح نہیں تھا کہ اس کی حتمی منزل کون سی بندرگاہ ہو گی۔ اس لئے کہ لیبیا میں قذافی فاؤنڈیشن منگل کی شام تک یہ دعوے کر رہی تھی کہ یہ جہاز مسلسل غزہ پٹی کے ساحلی علاقے کی طرف سفر میں ہے جبکہ اس کے کپتان نے منگل ہی سے یہ بیان دینا شروع کر دئے تھے کہ وہ غزہ کی طرف جانے کے بجائے کسی مصری بندرگاہ میں لنگر انداز ہو جائیں گے۔

منگل کی رات سے لے کر بدھ دوپہر تک اسرائیلی جنگی جہازوں نے اس کارگو شپ کو مسلسل اپنے گھیرے میں لئے رکھا اور اس بات کو یقینی بنایا کہ یہ دوران سفر غزہ کے ساحلی علاقے کا رخ نہ کرے۔

اس بحری جہاز نے غزہ کی طرف اپنا سفر گزشتہ ہفتے کے روز یونان سے شروع کیا تھا اور اس جہاز کی شپنگ ایجنٹ کمپنی کے مطابق امالتھیا پر اس کے عملے کے بارہ ارکان کے علاوہ نو مسافر بھی سوار تھے۔ ان میں سے چھ لیبیا کے باشندے بتائے گئے تھے۔

Libysche Flotte für Gaza

کارکن اس جہاز میں امدادی سامان جمع کر رہے ہیں

العارش کی بندرگاہ پہنچنے کے بعد امالتھیا کے کپتان نے کہا کہ اس جہاز پر لدا امدادی سامان العارش ہی میں اتار لیا جائے گا، جہاں سے یہ خوراک اور ادویات زمینی راستے سے غزہ پٹی کے فلسطینی علاقے میں پہنچائی جائیں گی۔

مالدووا کے پرچم والے اس تجارتی بحری جہاز کے العارش میں لنگر انداز ہونے کے بعد بین الاقوامی سطح پر سکون کا سانس لیا گیا۔ بہت سے ماہرین کو یہ خدشہ بھی تھا کہ اگر اس جہاز کے ذریعے اسرائیل کی طرف سے غزہ کی بحری ناکہ بندی کی زبردستی خلاف ورزی کرنے کی کوشش کی گئی تو نتائج غزہ ہی کے لئے مئی کے مہینے میں ترکی سے روانہ ہونے والے بحری امدادی قافلے پر اس حملے کے نتائج سے مختلف نہیں ہوں گے، جس میں اسرائیلی کمانڈوز کے ہاتھوں متعدد ترک شہری مارے گئے تھے۔

Israelischer Angriff auf Hilfskonvoi für Gaza

غزہ کے لئے ترکی سے روانہ ہونے والے بحری امدادی قافلے پر اسرائیلی کمانڈوز نے حملہ کر دیا تھا جس میں متعدد ترک شہری مارے گئے تھے

اس وجہ سے ترکی اور اسرائیل کے مابین لفظوں کی جنگ اور شدید نوعیت کی سفارتی کھینچا تانی ابھی تک ختم نہیں ہو سکی ہے۔

قاہرہ سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق العارش کی مصری بندرگاہ میں اس جہاز سے اتارا جانے والا امدادی سامان ریڈ کراس کی مصری تنظیم کے حوالے کیا جائے گا، جو اسے فلسطینی سرحد تک پہنچانے کی ذمہ دار ہو گی۔ مصر کے ساتھ سرحد سے یہ اشیائے خوراک اور ادویات غزہ میں زیادہ تر اسرائیلی ناکہ بندی کے باعث بد حالی کے شکار مقامی باشندوں تک پہنچانے کا کام خود فلسطینیوں کو کرنا ہو گا۔

العارش بندرگاہ کی انتظامیہ کے مطابق امالتھیا سے امدادی سامان اتارنے کا کام ممکنہ طور پر آج جمعرات کے روز مکمل ہو جائے گا۔

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: گوہر نذیر گیلانی

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات