1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

غزہ کا بحران اور عالمی کوششیں

غزہ پٹی پر اسرائیلی حملوں میں اب تک 660 سے زائد افراد ہلاک اور تقریباً تین ہزار زخمی ہو چکے ہیں۔ اسرائیل۔فلسطین تنازعے کے حل کے لئے جرمنی سمیت یورپی اور عالمی کوششیں جاری ہیں۔

default

غزہ پٹی پر اسرائیلی حملوں میں اب تک 660 سے زائد افراد ہلاک اور تقریباً تین ہزار زخمی ہو چکے ہیں

اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل میں مصری صدر حسنی مبارک کی جانب سے پیش کردہ تجاویز کا خیر مقدم کیا گیا اور امریکی وزیر خارجہ کونڈولیزا رائس سمیت دیگر ممالک کے وزرائے خارجہ نے ان تجاویز کو قابل قبول قرار دیا۔

Treffen in Ägypten zur israelischen Offensive in Gaza

مصری صدر حسنی مبارک یورپی یونین کے سفارتی مشن کے ساتھ مزاکرات میں مصروف

یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ چیف خاوئیر سولانا نے مصری صدر حسنی مبارک کی اسرائیل۔فلسطین جنگ بندی تجاویز کے حوالے سے کہا ہے کہ اس پر اگلے چند گھنٹوں میں مثبت پیش رفت متوقع ہے۔ ادھر سلامتی کونسل اسرائیل کی جانب سے ان امن تجاویز پر رد عمل کی منتظر ہے۔

Treffen in Ägypten zur israelischen Offensive in Gaza

مصری وزیر خارجہ احمد ابولغیط یورپی مشن کے سفارتکاروں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے

مصری صدر حسنی مبارک نے فرانسیسی صدر نکولا سارکوزی اور یورپی یونین کے خارجہ پالیسی چیف خاوئیر سولانا سے ملاقاتوں کے بعد اسرائیل پر زور دیا تھا کہ وہ فوری طور پر مذاکراتی عمل میں شامل ہو۔ اسرائیل ان تجاویز کا جائزہ لے رہا ہے۔

ادھر بدھ کو جرمن وزیر خارجہ فرانک والٹر اشٹائن مائر نے اپنے ایک ٹیلی ویژن انٹرویو میں برلن حکومت کی طرف سے غزہ پٹی کے علاقے میں فوری طور پرفائربندی پرزوردیا ہے۔ جرمن ورزیر خارجہ نے کہا کہ اس سلسلے میں کسی کی کوششیں ناکام رہیں یا موثر ثابت نہ ہوں، غلط طرز عمل ہے۔ ’’ خاوئیر سولانا کی سربراہی میں یورپی یونین کے اعلی سطحی وفد کا اسرائیل کا دورہ غیرمعمولی اہمیت کا حامل تھا۔ ایسی کوششوں میں کامیابی فوراً نہیں ہوتی۔ اہم امریہ ہے کہ عالمی برادری اسرائیل اور اس کے عرب پڑوسی ممالک کے ساتھ مذاکرات کا سلسلہ جاری رکھے تاکہ آئندہ دنوں میں قیام امن کے معاہدے کے لئے واضح شرائط طے کی جا سکیں۔‘‘

Nato Treffen in Brüssel mit Frank Walter Steinmeier

جرمن وزیر خارجہ فرانک والٹر سٹائن مائیر بھی غزہ میں فوری جنگ بندی کی وکالت کررہے ہیں

مصری صدر حسنی مبارک نے منگل کو امن کوششوں کے سلسلے میں دورے پر آئے ہوئے فرانسیسی صدر نکولا سرکوزی سے ملاقات کے بعد ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں اپنا مجوزہ امن منصوبہ پیش کیا۔ تین نکاتی اس منصوبے میں پہلے مرحلے میں اسرائیل اور حماس کی جانب سے فوری طور پر جنگ بندی، دوسرے مرحلے میں مصر میں حماس اور اسرائیل کے درمیان مزاکرات اورتیسرے میں مصر کی طرف سے الفتح، حماس اور دیگر فلسطینی تنظیموں کو مذاکرات کی دعوت دینا شامل ہے۔

دوسری جانب اسرائیلی وزیراعظم ایہود اولمرٹ نے غزہ میں محصور فلسطینیوں تک بین الاقوامی امداد پہنچانے کے لئے راستہ کھولنے کا اعلان کیا۔ اسرائیلی وزیر اعظم کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق غزہ میں انسانی المیے سے بچنے کے لئے اسرائیل محدود وقت کے لئے مخصوص راستوں سے بین الاقوامی امداد، جس میں خوراک اور ادویات شامل ہیں، غزہ میں داخل ہونے کی اجازت دے گا۔

دوسری جانب لاطینی امریکی ملک وینیوزویلا نے غزہ پر اسرائیلی حملے کے تناظر میں اسرائیل سفیراورعملے کو 72 گھنٹے کے اندر ملک چھوڑنے کا حکم دے دیا۔ اسرائیلی وزارت خارجہ نے اس کی تصدیق بھی کر دی ہے۔