1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

غزہ تنازعے کے سلسلے میں جاری سفارتی کوششیں

غزہ تنازعے کے سلسلے میں جہاں سیکیورٹی کونسل میں جنگ بندی کے حوالے سے بحث جاری ہے وہیں فرانس اور مصر کی جانب سے جنگ بندی کی نئی تجاویز بھی سامنے آئی ہیں۔

default

اسرائیلی فوجی غزہ پٹی میں

غزہ پٹی پر اسرائیلی فضائی اور زمینی کارروائیوں کا آج بارہواں دن ہے۔ اِس فوجی آپریشن میں اب تک 600 کے قریب افراد ہلاک ہوچکے ہیں جبکہ 2700 سے زائد افراد زخمی ہیں۔ گزشتہ روز اقوام متحدہ کے زیر نگرانی کام کرنے والے اسکول پر اسرائیلی بمباری کے نتیجے میں 40 سے زائد افراد ہلاک ہوگئے۔ جنگ سے بچنے کے لئے یہ لوگ وہاں پناہ لئے ہوئے تھے۔

Nicolas Sarkozy bei Hosni Mubarak Ägypten

مصر اور فرانس کے صدُور

ادھر مشرق وسطیٰ کی صورتحال کے حوالے سےاقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کےاجلاس میں ممبر ممالک اور عرب ممالک کے وزراء خارجہ نے اسرائیل سے فوری جنگ بندی کا مطالبہ کیا ہے۔ فرانسیسی وزیر خارجہ Bernard Couchner نے فوری طور پر جنگ بندی کی ضرورت پر زور دیاہے۔ برنارڈ کوشنر نے جنکی زیر صدارت یہ اجلاس ہوا حماس کی جانب سے فوری طور پر راکٹ حملے بند کرنے کابھی مطالبہ کیا۔

اجلاس میں مصری صدر حسنی مبارک کی جانب سے پیش کئے جانے والے جنگ بندی منصوبے کی امریکی وزیر خارجہ کونڈولیزا رائس سمیت دوسرے وزرائے خارجہ نےحمایت کی ہے۔ فلسطینی صدر محمود عباس نے بھی سلامتی کونسل کے اجلاس سےخطاب کرتے ہوئے مصری صدر کی جانب سے پیش کیے جانے والے

Kämpfe im Gazastreifen

غزہ پٹی پر اسرائیلی فوجی اپریشن

جنگ بندی منصوبے کی حمایت کی ۔ اس موقع پر انہوں نے کہا کہ وہ مصری صدر حسنی مبارک اور فرانسیسی صدر نکولاس سرکوزی کے منصوبے کی قدر اور حمایت کرتے ہیں۔

مصری صدر حسنی مبارک نے کل منگل کے روز امن کوششوں کے سلسلے میں دورے پر آئے ہوئے فرانسیسی صدر نکولا سرکوزی سے ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس میں اپنا مجوزہ امن منصوبہ پیش کیا ۔تین نکاتی اس منصوبے میں پہلے مرحلے میں اسرائیل اور حماس کی جانب سے فوری طور پر جنگ بندی۔ دوسرے مرحلے میں مصر میں حماس اور اسرائیل کے درمیان مزاکرات تاکہ آئندہ اس قسم کی صورتحال سے بچا جاسکے اور تیسرے مرحلے میں مصر کی طرف سے الفتح، حماس اور دیگر مدمقابل فلسطینی تنظیموں کو مذاکرات کی دعوت شامل ہے۔ تاکہ اسرائیل اور فلسطین کے درمیان مسئلے کا دیرپا حل تلاش کیا جاسکے۔

دوسری جانب اسرائیلی وزیر اعظم ایہود اولمرٹ نے غزہ میں محصور فلسطینیوں تک بین الاقوامی امداد پہنچانے کے لئے راستہ کھولنے کا اعلان کیا ہے۔ اسرائیلی وزیر اعظم کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق غزہ میں انسانی المیے سے بچنے کے لئے اسرائیل محدود وقت کے لئے مخصوص راستوں سے بین الاقوامی امداد جس میں خوراک اور ادویات شامل ہیں غزہ میں داخل ہونے کی اجازت دے گا۔