1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

غزہ: امدادی بحری جہاز پر اسرائیلی فوجی حملے کی رپورٹ

اسرائيلی فوجی کميشن نے مئی کے آخر ميں غزہ کے لئے امدادی اشيا لے جانے والے بحری قافلے پر اسرائيلی فوج کے حملے کے بارے ميں 150 صفحات پر مشتمل رپورٹ پيش کر دی ہے۔

default

غزہ امداد لے کر جانے والا ایک بحری جہاز: فائل فوٹو

اسرائيلی فوج کے تحقيقاتی کميشن کے مطابق امدادی بحری قافلے کو غزہ کے ساحل تک پہنچنے سے روکنے کے لئے فوج نے جو کارروائی کی تھی، اس کی تياری ميں غلطياں کی گئيں اور خفيہ اداروں نے اس سلسلے ميں غلط اطلاعات فراہم کیں۔ تاہم کميشن کے سربراہ ميجر جنرل گيورا آئی لاند نے کہا کہ فوج نے اس پيچيدہ آپريشن ميں کسی لاپرواہی کا مظاہرہ نہيں کيا ليکن خصوصاً اعلٰی سطح پر مختلف فيصلوں ميں غلطياں کی گئيں۔

کميشن کی رپورٹ ميں امدادی جہاز پر کارروائی کرنے والے اسرائيلی فوجيوں اور آپريشن کے دوران اور بعد ميں زخميوں کے انخلاء کے وقت اُن کے طرز عمل کی واضح طور پر تعريف کی گئی ہے۔ اس اسرائيلی آپريشن ميں امدادی بحری قافلے کے نو ترک شرکاء جاں بحق ہوگئے تھے۔ تاہم رپورٹ ميں اس کارروائی کی منصوبہ بندی ميں خاميوں پر تنقيد کی گئی ہے۔

Libysche Flotte für Gaza Flash-Galerie

مئی میں غزہ جانے والے بحری جہاز کا امدادی سامان

اسرائيلی فوجی تحقيقاتی کميشن کی رپورٹ کے مطابق اسرئيلی کمانڈو آپريشن کا فيصلہ قابل فہم تھا کيونکہ اسرائيلی بحريہ کے پاس امدادی حہاز کو روکنے کے لئے اس کے علاوہ کوئی اور راستہ نہيں تھا۔ تاہم بحريہ کی اعلٰی کمان نے اس امکان کو پیشِ نظر نہيں رکھا تھا کہ فوجيوں کو امدادی جہاز پر پُر تشدد مزاحمت کا سامنا بھی کرنا پڑ سکتا تھا۔

تحقيقاتی کميشن نے يہ بھی کہا ہے کہ بحريہ نے خفيہ اداروں کے ساتھ موزوں اشتراک عمل نہيں کيا۔ کميشن نے انفرادی طور پر فوجی افسران کے خلاف ضابطے کی کسی کارروائی کی سفارش نہيں کی ہے۔ کميشن کے سربراہ گيورا نے کہا:’’ہمارا ہدف غلطيوں اور حالات سے سبق سيکھنا ہے تاکہ مستقبل ميں فوج کی استعدادِ کار کو بہتر بنايا جا سکے۔‘‘

اسی دوران ليبيا کا ايک بحری جہاز بھی فلسطينيوں کے لئے امدادی اشياء لے کر غزہ کی طرف روانہ ہوچکا ہے۔ اس پس منظر میں بھی گيورا نے کہا کہ امدادی قافلے کے خلاف حاليہ کارروائی سے جلد از جلد درست نتائج اخذ کرنا انتہائی ضروری ہے۔

Protest Türkei Gaza Blockade NO FLASH

غزہ امداد لیکر جانے والے بحری جہاز پر اسرائیلی فوجی کارروائی کے خلاف غزہ کا ایک احتجاجی

اسرائيلی ایلیٹ کمانڈو دستے نے 31 مئی کو بحيرہء روم ميں ترکی کے ايک مسافر بردار جہاز ’ماوی مارمرا‘ پر حملہ کيا تھا۔ جہاز پر 500 افراد سوار تھے۔ اسرائيل نے غزہ کے علاقے کی بحری ناکہ بندی بھی کر رکھی ہے اور وہ امدادی بحری قافلے کو يہ ناکہ بندی توڑ کر غزہ کے ساحل تک پہنچنے سے روکنا چاہتا تھا کيونکہ اسے خدشہ ہے کہ اس طرح فلسطينيوں تک اسلحہ بھی پہنچايا جا سکتا تھا۔ اسرائيلی بحريہ کی اس خونریز کارروائی کی دنيا بھر ميں مذمت کی گئی تھی۔

رپورٹ: یاکوب مائر (تل ابیب) / شہاب احمد صدیقی

ادارت: امجد علی

DW.COM