1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

غربت میں کمی کے بھارتی منصوبوں پر ورلڈ بینک کی تنقید

بھارت میں حکومت کی جانب سے اقتصادی ترقی کے ساتھ ساتھ غربت کم کرنے کی کوششیں بھی جاری ہیں۔ اس مناسبت سے جاری اسکیموں کے بنیادی پلان پر ورلڈ بینک کی جانب سے تنقید سامنے آئی ہے۔

default

عالمی بینک کے ماہر اقتصادیات جان بلوم کوئسٹ کا خیال ہے کہ بھارت میں غریبی ختم کرنے کی جو اسکیمیں عمل میں لائی جا رہی ہیں ان میں روپے کی قدر اور اہمیت کو علیٰحدہ رکھنے کے ساتھ ساتھ کرپشن کا عنصر بھی شامل ہے اور اس باعث ان کے اثرات گراس روٹ سطح تک پہنچنے سے قبل ہی مختص فنڈ ختم ہو جاتے ہیں۔ بھارتی سماجی مبصرین پہلے ہی پلانز کو ناپائیدار ہونے کی بنیاد پر ناکام قرار دے چکے ہیں۔ اس باعث کئی غیر سرکاری تنظیمیں مسلسل اس صورت حال پر اپنے تبصرے اور رپورٹس جاری کرتی رہتی ہیں۔

ان حکومتی اسکیموں میں مختلف سطحوں پر بدعنوانی کے عنصر کی موجودگی کے باعث غربت میں کمی کا ہدف مشکل بنا ہوا ہے۔

عالمی بینک کے اہم اور سینئر اکانومسٹ جان بلوم کوئسٹ کے مطابق غربت ختم یا اس میں کمی لانے کے اہم حکومتی ادارے، پبلک ڈسٹریبیوشن سسٹم (PDS) کے بیورو کریٹک سیٹ اپ کے اندر ایسا خلا موجود ہے کہ غریبوں کے لیے خوراک کی فراہمی اور تیل کی سپلائی مقررہ اہداف تک پہنچنے سے قبل ہی ہڑپ ہو جاتی ہے۔ بلوم کوئسٹ کے مطابق بھارت کی سالانہ شرح پیداوار کا صرف دو فیصد سماجی بھلائی کے پروگراموں کے لیے مختص کیا جاتا ہے۔ اس دو فیصد میں غریب تک بہت ہی کم حصہ پہنچ پاتا ہے۔ عالمی بینک کے اکانومسٹ کا یہ بھی واضح کرنا ہے کہ مختلف اسکیموں کے ثمرات اس آبادی تک پہنچ ہی نہیں پاتے کہ فنڈ ختم ہو جاتے ہیں۔

Stadtteil Malad von Mumbai in Indien Flash-Galerie

ممبئی کے پوش علاقے کے پہلو میں واقع غریبوں کی بستی

بھارت میں غربت ختم کرنے کے حوالے سے ورلڈ بینک کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ جنوبی ایشیا کے اس بڑے ملک میں بیالیس فیصد لوگ سوا ڈالر روزانہ کی کم رقم پر زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔ اس رپورٹ میں بھارت میں صحت عامہ کے علاوہ نوزائیدہ بچوں کی شرح اموات کے ساتھ ساتھ کثیف غذائی صورت حال کو براعظم افریقہ کے پسماندہ سب صحارہ علاقے کے بعض انتہائی غریب ملکوں سے بھی بدتر سطح پر محسوس کیا گیا ہے۔

رپورٹ میں سیفٹی کے معیارات کے کمزور ہونے کی جانب بھی نشاندہی کرتے ہوئے بیان کیا گیا ہے کہ غربت ختم کرنے کی پائیدار تحریکیں حکومتی سطح پر موجود ہے لیکن سرکاری حدود میں مناسب حفاظتی معیارات نہ ہونے کی وجہ سے ان تحریکوں کے مقاصد کا حصول ممکن نہیں ہے۔ اس رپورٹ میں پبلک ڈسٹریبیوشن سسٹم کے سیٹ اپ میں کثیر سرمائے کے استعمال ہونے کی وجہ سے اس ادارے کے زیر سایہ کل غریب آبادی کےایک چوتھائی غریب حکومتی پلان سے فائدہ اٹھانے سے قاصر ہیں۔

عالمی بینک کے ماہر اقتصادیات جان بلوم کوئسٹ کی رپورٹ سن 2004 اور 2005 میں مرتب کیے گئے سرکاری اعداد و شمار پر مبنی ہے۔ نئی دہلی میں مقیم عالمی بینک کے اکانومسٹ کے مطابق سن 2004 اور 2005 میں حکومت کی جانب سے غریبوں تک جواجناس پہنچ سکی تھیں وہ صرف 41 فیصد تھیں جو غریب آبادی کے حجم کے مقابلے میں بہت کم ہے۔ جان بلوم کوئسٹ نے اپنی رپورٹ میں پبلک ڈسٹریبیوشن سسٹم کو تحلیل کرنے کو اہم نہیں قرار دیا بلکہ غریب آبادی کو اجناس و تیل کے ساتھ ساتھ سرمایہ بھی فراہم کرنا اشد ضروری قرار دیا ہے۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: ندیم گِل

DW.COM

ویب لنکس