1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

غداروں کے سر کچلنے سے گریز نہیں کریں گے، ایردوآن

ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے عزم ظاہر کیا ہے کہ گزشتہ برس ہونے والی ناکام فوجی بغاوت کے ذمہ داروں کے خلاف سخت اقدامات کیے جائیں گے۔ انہوں نے یہ بات زور دے کر کہی ہے کہ وہ ملک میں سزائے موت بحال کریں گے۔

رجب طیب ایردوآن گزشتہ برس 15 جولائی کو ہونے والی ناکام فوجی بغاوت کو ایک برس مکمل ہونے پر استنبول کے باسفورس پُل پر عوام سے خطاب کر رہے تھے۔ اس موقع پر ہزارہا ترک شہری وہاں موجود تھے اور ترک پرچم لہرا رہے تھے۔ گزشتہ برس کی فوجی بغاوت کا راستہ روکتے ہوئے قریب 250 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

Türkei Putschversuch (picture-alliance/abaca/E. Öztürk)

ایردوآن کے خطاب کے موقع پر ہزارہا ترک شہری وہاں موجود تھے اور ترک پرچم لہرا رہے تھے

ایردوآن کا کہنا تھا، ’’ان باغیوں کو ہمیشہ نفرت سے یاد رکھا جائے گا۔‘‘ ان کا مزید کہنا تھا کہ ترکی ’’ایسے لوگوں کا سر کچلنے سے گریز نہیں کرے گا جنہوں نے غداری کی۔‘‘

جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق ایردوآن نے اس موقع پر ’دہشت گردوں‘ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ وہ ’’ان دہشت گردوں کی گردن پہلے اڑائیں گے۔‘‘ مذہبی حوالہ جات سے بھرپور ایردوآن کے اس خطاب پر اپوزیشن کی طرف سے شدید تنقید کی گئی ہے۔

ایردوآن کا یہ بھی کہنا تھا کہ جن افراد کو ناکام فوجی بغاوت سے تعلق کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے انہیں عدالت میں پیشی کے موقع پر اُسی طرز کا خصوصی لباس پہنایا جائے گا جو گوانتاناموبے کو قیدیوں کو پہنایا جاتا رہا ہے۔

استنبول کے باسفورس پُل پر یہ تقریب منعقد کرنے کا مقصد گزشتہ برس کی فوجی بغاوت کا راستہ روکتے ہوئے مارے جانے والے ترک شہریوں کو خراج عقیدت پیش کرنا تھا۔ باسفورس کا یہ پُل 2016ء کی بغاوت کا ایک اہم میدان جنگ تھا۔ اسی باعث گزشتہ برس ہی اس پُل کا نام بدل کر اسے ’’شہدا کا پل‘‘ قرار دے دیا گیا تھا۔

بعد ازاں ایردوآن نے دارالحکومت انقرہ میں بھی بغاوت کا راستہ روکتے ہوئے اپنی جان کی قربانی پیش کرنے والوں کی یاد میں منعقدہ ایک تقریب میں شرکت کی۔ تاہم ملکی اپوزیشن کے ارکان پارلیمان نے اس تقریب میں شرکت سے احتراز کیا۔ انقرہ میں اپنے خطاب کے دوران ایردوآن کا کہنا تھا کہ اگر ان کے سامنے سزائے موت کی بحالی کا قانونی بِل پیش کیا جاتا ہے تو وہ اس پر دستخط کر دیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر ایسے کسی بِل پر پارلیمان میں بحث کی جاتی ہے اور اس پر اتفاق رائے ہو جاتا ہے تو انہیں بھی اس پر دستخط کرنے میں کوئی جھجھک نہیں ہو گی۔

ویڈیو دیکھیے 00:29

ناکام فوجی بغاوت کے بعد ترک پارلیمان کے اندرونی مناظر


 

DW.COM

Audios and videos on the topic