1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’عید کے بعد رائے ونڈ جائیں گے‘

پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے بڑی عید کے فوراً بعد لاہور کے قریب رائے ونڈ میں واقع وزیراعظم نواز شریف کی نجی رہائش گاہ کے باہر احتجاجی دھرنے کا اعلان کیا ہے۔

لاہور میں رات گئے ایک بڑے احتجاجی دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے سپریم کورٹ سے یہ مطالبہ بھی کیا کہ وہ وزیر اعظم نواز شریف کو ملک سے فرار ہونے سے روکے اور ان کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں ڈالا جائے۔

DW.COM

اس موقعے پر تقریر کرتے ہوئے انہوں نے نواز شریف سے چار سوالوں کا جواب بھی مانگا ۔ ان کے مطابق نواز شریف کو بتانا پڑے گا کہ ان کے پاس اربوں روپے کہاں سے آئے، ان کا پیسہ ملک سے باہر کیسے گیا اور انہوں نے اپنی آمدنی پر کتنا ٹیکس دیا؟۔ اس کے علاو نواز شریف یہ بھی بتائیں کہ انہوں نے لندن میں جائیداد کیسے خریدی۔ عمران خان نے کہا اگر انہیں ان سوالوں کے جواب نہ ملے تو وہ عید کے بعد رائے ونڈ میں دھرنا دیں گے۔

دوسری طرف راولپنڈی میں ہونے والی ایک حکومت مخالف ریلی سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہرالقادری نے بھی رائیونڈ جانے کی دھمکی دے دی ہے تا ہم انہوں نے اس ضمن میں کسی حتمی تاریخ کا اعلان نہیں کیا ہے۔ ایک مسلم لیگی رہنما دانیال عزیز نے اس صورتحال پر ایک دلچسپ سوال اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ اس بات کی بھی کھوج لگائی جانی چایئے کہ شیخ رشید، طاہرالقادری اور عمران خان کو کون اکٹھا کر رہا ہے؟۔

عمران خان نے اپنی تقریر میں جنرل راحیل شریف کو سلام پیش کرتے ہوئے یہ بھی کہا کہ انہوں نے فیلڈ مارشل کا عہدہ اور مدت ملازمت میں توسیع کی حکومتی پیشکشوں کو قبول نہ کرکے بکنے سے انکار کر دیا ہے۔

عوامی نیشنل پارٹی نے مردان کے افسوسناک سانحے کے بعد لاہور کے جلسے میں پاکستان تحریک انصاف کے کارکنوں کی طرف سے ناچ گانے کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا ہے کہ یہ بھی سوچا جانا چاہیئے کہ کے پی کے کے جن گھروں میں کہرام مچا ہوا ہے ان کے دلوں پر کیا بیت رہی ہوگی۔

لاہور میں ہونے والی تحریک انصاف کی ریلی میں پاکستان مسلم لیگ ’ق‘ سمیت حزب اختلاف کی متعدد جماعتوں کے لوگ شریک ہوئے، ریلی کے شرکا کی تعداد 25000 سے زائد تھی۔ اس ریلی میں شرکت کے لیے پنجاب کے ایک درجن اضلاع سے لوگ لاہور پہنچے تھے۔

Pakistan Politiker Imran Khan PTI

عمران خان نے سپریم کورٹ سے یہ مطالبہ بھی کیا کہ وہ وزیر اعظم نواز شریف کو ملک سے فرار ہونے سے روکے

لاہور اور راولپنڈی میں ہونے والے اس احتجاج کا ایک تکلیف دہ پہلو یہ تھا کہ اس دوران احتجاجی ریلی کے شرکا کی حفاظت کے نام پر سڑکوں پر کھڑی کی جانے والی رکاوٹوں کی وجہ سے کئی مریض ہسپتال نہ پہنچ سکے اور یوں لاہور میں ایک کم سن بچہ اور راولپنڈی میں ایک خاتون مریضہ جاں بحق ہو گئے۔

وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید نے لاہور میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بتایا کہ اس ریلی کی وجہ سے 4 ارب روپے سے زائد کا نقصان ہوا ہے۔

پاکستان میں سیاسی مبصرین ستمبر کے مہینے کو اس حوالے سے اہم قرار دے رہے ہیں کہ اس مہینے میں حزب اختلاف کی جماعتیں حکومت کے خلاف اپنے احتجاج کا فیصلہ کن راونڈ منعقد کرنے جا رہی ہیں۔ پاکستان میں نومبر کے آخری ہفتے میں آرمی چیف کی ریٹائرمنٹ سے پہلے حکومت کی تبدیلی کے خدشات بھی بعض حلقوں کی طرف سے سامنے آتے رہے ہیں۔

تجزیہ نگاروں کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کو یہ خوف لاحق ہے کہ اگر اس وقت نوازحکومت کو نہ ہٹایا جا سکا تو پھر 2017ء کا سال الیکشن مہم کا سال ہو گا اور نواز حکومت کے ذریعے وجود میں آنے والی نگران حکومت کے ذریعے 2018ء میں ہونے والے عام انتخابات میں اپوزیشن جماعتوں کی کامیابی مزید مشکل ہو جائے گی۔

اگرچہ نواز حکومت ان احتجاجی سرگرمیوں کی وجہ سے آجکل شدید دباؤ میں ہے لیکن اس کے باوجود غیر جانب دار تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ فی الحال حکومت کے خاتمے کا کوئی امکان نہیں ہے۔