1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عسکری اخراجات، سعودی عرب نے روس کو پیچھے چھوڑ دیا

امریکا اور چین ابھی تک عسکری اخراجات میں صف اول کے ممالک ہیں تاہم سعودی عرب روس کو پیچھے چھوڑتے ہوئے تیسرے نمبر پر آ گیا ہے۔ سپری کی رپورٹ کے مطابق تیل کی گرتی ہوئی قیمتوں اور معاشی بحران نے متضاد رجحانات کو جنم دیا ہے۔

امن پر تحقیق کرنے والے سویڈش ادارے’ سپری‘ کی تازہ رپورٹ کے مطابق سال 2015ء کے دوران عالمی سطح پر عسکری شعبے پر خرچ کی جانے والی رقوم میں ایک فیصد کا اضافہ ہوا ہے۔ گزشتہ برس تقریباً 1.7 ٹریلین ڈالر اسلحے کی خرید و فروخت پر خرچ کیے گئے۔ 2011ء کے بعد ہونے والے اس پہلے اضافے کی وجہ مختلف ممالک میں جاری تنازعات ہیں، جن میں اسلامک اسٹیٹ کے خلاف جاری بین الاقوامی اتحاد کی کارروائیاں، ایران سے خوف، یمن اور شام کے تنازعات سر فہرست ہیں۔ اس رپورٹ کے مطابق بحیرہ جنوبی چین میں بیجنگ حکومت کی بڑھتی ہوئی عسکری سرگرمیاں، کریمیا میں روسی مداخلت اور مشرقی یوکرائن میں باغیوں کی حمایت بھی عسکری اخراجات میں اضافے کا سبب بنی ہے۔

Schweden Logo Friedensforschungsinstitut SIPRI

سپری کے مطابق ایک ایسے وقت میں جب عالمی سطح پر تیل کی گرتی ہوئی قیمتوں نے بہت سے ممالک کو پریشان کیا ہوا ہے اور کئی ممالک نے اپنے دفاعی اخراجات بھی کم کر دیے ہیں تو اس صورتحال میں یہ اضافہ غیر معمولی تناؤ کی جانب اشارہ کر رہا ہے۔ رپورٹ کے مطابق امریکا نے گزشتہ برس 596 ارب ڈالر جبکہ چین نے 215 ارب ڈالر دفاعی شعبے پر خرچ کیے جبکہ اس فہرست میں تیسرا نام سعودی عرب کا ہے، جس نے 87.2 ارب کا اسلحہ خریدا۔ اس سے قبل روس اس فہرست میں تیسرے نمبر پرتھا تاہم ماہرین کا خیال ہے روسی کرنسی روبل کی گرتی ہوئی قدر کی وجہ سے روسی دفاعی اخراجات 66.4 ارب ڈالر رہے۔ اس فہرست میں اس کے بعد برطانیہ،بھارت، فرانس، جاپان اور پھر نویں نمبر پر جرمنی کا نام آتا ہے جبکہ دسویں نمبر پر جنوبی کوریا ہے۔

یورپ میں دفاعی شعبے میں اٹھنے والے اخراجات میں1.7 فیصد کا اضافہ ہوا ہے۔ اس اضافے میں اہم کردار مشرقی یورپی ممالک نے ادا کیا ہے، جنہوں نے مشرقی یوکرائن کے بحران کے رد عمل میں اپنے عسکری اخراجات بڑھائے۔ دوسری جانب گزشتہ برس کے دوران سب سے بڑے پیمانے پر دفاعی اخراجات کو کم کرنے والا ملک وینزویلا رہا۔ تیل کی گرتی ہوئی قیمتوں کی وجہ سے اس ملک کو اپنے فوجی بجٹ میں 64 فیصد تک کی کمی کرنا پڑی۔