1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عرب ترک وزارتی کانفرنس: فری ٹریڈ زون بنانےکا اعلان

ترک عرب وزارتی کانفرنس سے جعمعرات کو خطاب کرتے ہوئے وزیرِاعظم رجب طیب ایردُوآن نے ایک علاقائی فری ٹریڈ زون کی تشکیل کے منصوبے کا اعلان کردیا ہے، جس میں ترکی، شام، لبنان اور اُردن شامل ہوں گے۔

default

ترکی کی اسلام پسند حکومت کی کوشش ہے کہ وہ شام سمیت خطے کے دوسرے ہمسایہ مسلم ممالک سے اچھےتعلقات استوار کرے

اِس وزارتی کانفرنس میں جب طیب ایردوآن کو خطاب کی دعوت دی گئی توعرب لیگ کے 22 رکن ممالک کے مندوبین نے پرزور تالیوں میں اُن کا استقبال کیا۔ غزہ کی ناکہ بندی اور امدادی جہازوں پر اسرائیلی حملے جیسے معاملات پر ترکی نے جو مؤقف اپنایا ہے اس کی وجہ سے طیب ایردوآن عرب دنیا میں مقبول ہوگئے ہیں۔

Boote im Meer von Gaza

امدادی جہازوں پر اسرائیلی حملے پر سخت موقف نے ترک قیادت کو عرب دنیا میں مقبول بنا دیا ہے

ترک وزیرِاعظم نے اپنی تقریر کو صرف اقتصادی موضوعات تک ہی محدود نہیں رکھا بلکہ اُنہوں نے سیاسی مسائل پر بھی بے باک تبصرہ کیا۔ طیب ایردوآن نے ایران کے خلاف اقوامِ متحدہ کی پابندیوں کو ایک غلطی قرار دیا۔ انہوں نے ترکی کی طرف سے اِن پابندیوں کی مخالفت کو جائز قرار دیتے ہوئے کہا کہ ایران کے جوہری پروگرام کا معاملہ سفارتی انداز میں حل کیا جانا چاہیے۔ مزید یہ کہ انقرہ اس سلسلے میں کوششیں جاری رکھے گا۔

سال 2002ء میں طیب ایردوآن کی اسلام پسند جماعت کے اقتدار میں آنے کے بعد سے ترکی اور اُس کے مسلم ہمسایہ ممالک میں تجارت کا حجم بڑھ گیا ہے۔ ایران کے لئے ترکی مصنوعات کی برآمدات میں 500 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ انقرہ نے 1.4بلین ڈالر مالیت کی ترک مصنوعات شام کو اور 690 ملین ڈالر مالیت کی مصنوعات لبنان کو برآمد کی ہیں۔

Robert Gates Washington USA

ترکی اور اُس کے ہمسایہ مسلم ممالک کے درمیان بڑھتے ہوئے تعلقات کو مغربی دنیا تشویش کی نظر سے دیکھ رہی ہے

ترکی اور اُس کے ہمسایہ مسلم ممالک کے درمیان بڑھتے ہوئے تعلقات کو مغربی دنیا تشویش کی نظر سے دیکھ رہی ہے۔ کئی تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ انقرہ کئی برسوں سے اِس انتظار میں ہے کہ یورپی یونین اسے اپنا رکن بنائے لیکن رکن سازی کے اس عمل میں تاخیر ترک قیادت کو مشرق کے قریب لے جا رہی ہے۔

بدھ کو امریکی وزیرِ دفاع رابرٹ گیٹس نے بھی اس جانب اشارہ کیا تھا کہ یورپی یونین کی طرف سے ترکی کو رکن بنانے کے عمل میں تاخیر، انقرہ کے مشرق کی طرف جھکاؤ کی ایک وجہ ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ تاخیر ترک اسرائیل تعلقات میں کشیدگی کی بھی ایک بڑی وجہ ہے۔ اٹلی کے وزیرِ خارجہ فرانکو فراتینی نے بھی رابرٹ گیٹس کے اس نقطہ نظر سے اتفاق کیا اور یورپی یونین پر زور دیا ہے کہ وہ ترکی کی رکنیت سازی کے عمل کو تیز کرے۔

مغربی تجزیہ نگاروں اور سیاست دانوں کے برعکس ترک وزیرِ اعظم اس تاثر کو غلط قرار دیتے ہیں کہ ترکی مغرب سے اپنا تعلق توڑ رہا ہے۔ ان کا کہنا ہے جو عناصر یہ کہہ رہے ہیں وہ دراصل ترکی کے خلاف پروپیگنڈہ کرنا چاہتے ہیں۔

طیب ایردوآن کا کہنا تھا کہ فرانس شام سمیت کئی عرب ممالک میں سرمایہ کاری کررہا ہے لیکن جب اِس ہی طرح کی سرمایہ کاری ترکی کرتا ہے تو ایک پروپیگنڈہ شروع ہوجاتا ہے کہ انقرہ مغرب سے دور ہورہا ہے۔ ترک وزیرِ اعظم کا استدلال تھا کہ ان کا ملک تما م ممالک سے اچھے تعلقات رکھنا چاہتا ہے۔ تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ عرب ترک وزارتی کانفرنس عرب دنیا میں ترک قیادت کے تصور کو بہتر بنانے میں مدد دے گی۔

رپورٹ: عبدالستار

ادارت: افسر اعوان