1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عراق کے پارلیمانی انتخابات پر عالمی برادری کا ردعمل

عراق میں صدام دَور کے بعد دوسرے پارلیمانی انتخابات میں اتوار کو وہاں کے عوام نے پرتشدد کارروائیوں اور دھمکیوں کے سائے میں اپنا حق رائے دہی استعمال کیا۔ تاہم انہوں نے عالمی برادری کی ستائش بھی جیت لی۔

default

عراقی وزیر نوری المالکی ووٹ کاسٹ کر رہے ہیں

Obama / USA / Washington

امریکی صدر باراک اوباما

امریکہ اور اقوام متحدہ سمیت عالمی برادری نے عراقی میں انتخابی عمل اور عوام کے حوصلے کو سراہا ہے۔ امریکی صدر باراک اوباما نے تمام ووٹرز کو خراج تحسین پیش کیا۔ انہوں نے کہا کہ وہ ان لاکھوں عراقی شہریوں کی قَدر کرتے ہیں، جنہوں نے تشدد کے خوف کے باوجود ووٹ ڈالنے سے انکار نہیں کیا، جنہوں نے اپنا یہ حق استعمال کیا۔

اوباما نے کہا کہ انتخابی عمل عراق کی تاریخ میں ایک اہم سنگ میل تھا اور اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ عراقی عوام کا مستقبل ان کے اپنے ہاتھوں میں ہے۔

واشنگٹن انتظامیہ نے امید ظاہر کی ہے کہ اس انتخابی عمل سے عراق میں جمہوریت کو فروغ حاصل ہو گا۔

برطانوی وزیر خارجہ ڈیوڈ ملی بینڈ نے انتخابی مرحلے سے عراقی عوام کی سنجیدگی کو اہم قرار دیا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ پولنگ کے روز ہونے والے پرتشدد واقعات سے عراقی عوام کو درپیش چیلنجز کا اندازہ بھی ہوتا ہے۔

Frankreich Neues Kabinett Bernard Kouchner

برنارڈ کوشنیر

فرانسیسی وزیر خارجہ برنارڈ کوشنیر نے کہا کہ عراقی عوام نے اپنے اور اپنے بچوں کے مستقبل کے لئے ووٹ دیا۔ انہوں نے کہا کہ بحالی اور جمہوریت کے لئے عراق کی کوششوں میں فرانس اور اس کے یورپی اتحادی تعاون جاری رکھیں گے۔

یورپی یونین کی سربراہ برائے خارجہ پالیسی کیتھرین ایشٹن نے کہا کہ عراقی عوام اپنے ملک میں جمہوریت چاہتے ہیں اور یہ بات ٹرن آؤٹ سے ظاہر ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس عمل کی قدر کی جانی چاہئے۔

اقوام متحدہ نے بھی عراقی ووٹروں اور منتظمین کو سراہا ہے۔ تاہم اس عالمی ادارے نے یہ بھی کہا ہے کہ نتائج کے بارے میں قیاس آرائیوں سے محتاط رہنا چاہئے۔ عراق میں اقوام متحدہ کے سفیر Ad Melkert نے بغداد میں صحافیوں سے گفتگو میں کہا کہ یہ تنازعے اور تشدد پر فتح کا دن ہے۔

اقوام متحدہ کے سفیر نے بغداد اور شمالی شہر کرکوک میں پولنگ اسٹیشنوں کا دورہ بھی کیا۔ انہوں نے ووٹنگ کے لئے کئے گئے انتظامات کو بھی سراہا۔

ان انتخابات کو مختلف بحرانوں کا سامنا کرنے والے اس ملک کی نوعمر جمہوریت کے لئے ایک امتحان قرار دیا جا رہا تھا۔ یہ اس لئے بھی اہم تھے کہ اس مرحلے کے چھ ماہ بعد امریکی افواج عراق چھوڑ دیں گی۔

Belgien EU Parlament Anhörung Catherine Ashton

یورپی یونین کی سربراہ برائے خارجہ پالیسی کیتھرین ایشٹن

’دی انڈیپینڈنٹ ہائی الیکٹورل کمیشن‘ کے ابتدائی جائزوں کے مطابق ٹرن آؤٹ 50 فیصد سے کچھ زائد رہا ہے۔ تاہم یہ جائزہ ملک کے 16میں سے صرف ایک صوبے کی صورت حال کا ہے۔

مکمل انتخابی نتائج 18 مارچ سے قبل متوقع نہیں ہیں۔ کوئی واحد پارٹی اکثریت حاصل کرنے کی پوزیشن میں دکھائی نہیں دیتی، اس لئے حکومت کے قیام میں نتائج کے بعد کافی عرصہ لگ سکتا ہے۔

اتوار کو ووٹنگ کے دوران زیادہ پرتشدد کارروائیوں بغداد میں ہوئی۔ فلوجہ، بعقوبہ، سمارا اور دیگر شہر بھی ایسی کارروائیوں کا نشانہ بنے۔ اس کے نتیجے میں کم از کم 38 افراد ہلاک ہوئے۔ القاعدہ نے انتخابی عمل کو سبوتاژ کرنے کی دھمکی دے رکھی ہے۔

رپورٹ: ندیم گل / خبررساں ادارے

ادارت : عابد حسین

DW.COM