1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عراق میں کار بم حملہ، کم از کم 30 افراد ہلاک

عراق کے شمالی صوبے دیالا میں جمعے کے روز ہونے والے کار بم حملے میں کم از کم 30 افراد ہلاک جبکہ 80 زخمی ہوگئے ہیں۔ حملہ آووروں نے باردو سے بھری ایک وین ایک پرہجوم ریستوران سے ٹکرا دی۔

default

پولیس حکام کے مطابق یہ دھماکہ خالص شہر کے پولیس کے سریع الحرکت دستوں کے ہیڈکواٹر سے چند قدم کی دوری پر پیش ہوا۔ پولیس کا کہنا ہے کہ دارالحکومت بغداد سے 50 میل کے فاصلے پر واقع اس شہر میں جمعے کی شام یہ خودکش کار بم حملہ اس وقت ہوا، جب لوگوں کی ایک بڑی تعداد اس علاقے میں موجود تھی۔

Irak Anschläge Wahltag 2010 Bagdad

دھماکے کے نتیجے میں آس پاس کی عمارتوں کو شدید نقصان پہنچا

پولیس لیفٹینینٹ عبدالجباراحموئید کے مطابق دھماکہ اس قدر شدید تھا کہ اس سے آس پاس واقع متعدد دکانیں زمین بوس اور چند عمارتوں کی چھتیں منہدم ہو گئیں۔

’’کیفے، جس میں بہت سے افراد موجود تھے، کی عمارت منہدم ہوگئی۔ ہمیں خدشہ ہے کہ بہت سے افراد ابھی ملبے تلے دبے ہوئے ہیں۔‘‘

عراق بھر میں پرتشدد کارروائیاں میں قدرے کمی کے باوجود شمالی عراق ابھی تک دہشت پسندوں کے پے در پے حملوں کا شکار ہے۔ عراق میں خودکش بم حملے بھی وقفے وقفے سے دیکھنے میں آتے رہتے ہیں۔

خالص شہر میں رواں برس مارچ میں بھی ایک بم حملے میں 60 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ صوبے دیالا ہی کے ایک اور علاقے سعدیا میں گزشتہ پیر کو ایک نامعلوم عسکریت پسند نے ایک مقامی مذہبی رہنما کا سر قلم کر کے اسے بجلی کے کھمبے سے لٹکا دیا۔ اس مقامی مسجد کے امام نے القاعدہ پر تنقید کی تھی اور دہشت پسندی کو غلط قدم قرار دیا تھا۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : کشور مصطفیٰ