1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عراق میں سلامتی سے جڑے اندیشوں میں شدت

شورش زدہ عراق میں دہشت گردی کے تازہ ہلاکت خیز واقعات نے ملک کے مستقبل کے حوالے سے ایک مرتبہ پھر بہت اندیشوں کو جنم دیا ہے۔ جمعہ کو اسی نوعیت کے حملوں میں لگ بھگ 70 افراد کی ہلاکت کو القاعدہ کی کارروائی قراردیا جا رہا ہے۔

default

ان حملوں میں شدت پسند شیعہ رہنما مقتدیٰ الصدر کے صدر دفتر اور ان کے حامیوں کو نشانہ بنایا گیا، جن میں دو سو افراد زخمی بھی ہوئے۔

ادھر واشنگٹن میں امریکی صدر باراک اوباما نے کہا ہے کہ اس نوعیت کے واقعات کا امریکی افواج کے رواں سال اگست میں عراق سے واپسی کے منصوبوں پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔ عراق میں اس وقت 95 ہزار امریکی فوجی تعینات ہیں، جن میں سے 45 ہزار کو اگست کے اواخر میں جبکہ بقیہ کو اگلے سال واپس امریکہ بلا لیا جائے گا۔

Irak Antiamerikanische Demonstration Flash-Galerie

مقتدیٰ الصدر کے حامی

عراقی دارالحکومت بغداد میں تازہ حملے عین ایسے وقت کئے گئے جبکہ حکومت کی جانب سے القاعدہ کے پسپا ہوجانے کے دعوے کئے جا رہے ہیں اور سیاسی جماعتیں نئی حکومت کی تشکیل کے مشکل مرحلے سے گذر رہی ہیں۔

 عراقی وزیر اعظم نوری المالکی کے بقول جمہ کو کئے گئے بم دھماکے عراقی اور امریکی افواج کی ایک کارروائی میں القاعدہ کے دو کمانڈروں کی ہلاکت کا ردعمل ہیں۔ اتوار کی اس کارروائی میں القاعدہ کے کمانڈروں ابو عمر البغدادی اور ابو ایوب المصری کی ہلاکت کے دعوے کئے جا رہے ہیں۔

تازہ حملوں کی بظاہر نشانہ مقتدیٰ الصدر  کی حامی مہدی ملیشیا نے مساجد کے باہر حظاظتی اقدامات کے تحت ذمہ داریاں خود سنبھال لی ہیں۔ ایران مقیم الصدر کی جانب سے عراق متعینہ امریکی افواج پر حملوں میں ملوث مہدی ملیشیا سے دوبارہ ’ایکشن‘ میں آنے کا کہا گیا ہے۔

Irak Maliki zeigt getötete Al-Kaida Anführer Abu Ajjub und Abu Omar

عراقی وزیر اعظم نے القاعدہ کے کمانڈروں ابو عمر البغدادی اور ابو ایوب المصری کی تصاویر دکھاتے ہوئے ان کی ہلاکت کا دعویٰ کیا تھا

مقتدیٰ الصدر کی جماعت عراق پر امریکی حملے اور صدام دور کے خاتمے کے بعد حال ہی میں منعقدہ دوسرے پارلیمانی انتخابات میں تیسرے نمبر پر رہی ہے۔ ان انتخابات میں سرفہرست سابق وزیر اعظم ایاد علاوی اور دوسرے نمبر پر آنے والے موجودہ وزیر اعظم نوری المالکی کے لئے نئی حکومت کی تشکیل کے سلسلے میں مقتدیٰ الصدر کی حمایت اہمیت کی حامل ہے۔

دفاعی امور کے ماہرین البتہ خدشہ ظاہر کر رہے ہیں کہ  القاعدہ کی درمیانی درجے کی قیادت اب بھی عراق میں سرگرم ہے اور اس کے خلاف کارروائیاں کئے بغیر امن و امان ممکن نہیں۔

رپورٹ : شادی خان سیف

ادارت : امجد علی

DW.COM