1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عراق میں دُہرے حملے، پچاس افراد ہلاک

نیوز ایجنسیوں سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق جنوبی عراقی شہر ناصریہ میں دہرے حملوں میں کم سے کم پچاس افراد ہلاک جبکہ اسّی سے زائد زخمی ہو گئے ہیں۔ ہلاک شدگان میں ایرانی شہری بھی شامل ہیں۔

ناصریہ شہر میں شعبہ صحت کے سربراہ جاسم الخلیدی کے مطابق مقامی ہسپتال میں پچاس لاشیں  لائی گئی ہیں اور بعض زخمیوں کی تشویشناک حالت کے سبب خدشہ ہے کہ ہلاکتوں میں اضافہ ہو سکتا ہے۔ اطلاعات کے مطابق مرنے والوں میں پندرہ ایرانی سیاح بھی شامل ہیں۔

یہ ہلاکتیں فائرنگ اور کار بم حملوں کے دہرے واقعات میں ہوئیں۔ مقامی پولیس ذرائع کے مطابق شیعہ اکثریتی صوبے دہیقار کے شہر ناصریہ کے قریب ایک شاہراہ پر واقع ریستوران میں بیٹھے گاہکوں پر نامعلوم  مسلح افراد نے فائرنگ شروع کر دی۔ اس کے کچھ ہی دیر بعد اسی صوبے میں ایک سیکیورٹی چیک پوسٹ پر ایک کار بم حملہ بھی ہوا۔

  اسلامک اسٹیٹ یا ‘داعش‘  کے خبر رساں ادارے عماق کے مطابق دونوں حملوں کی ذمہ داری اس شدت پسند تنظیم نے قبول کر لی ہے۔

داعش گزشتہ کچھ عرصے سے اپنے زیر قبضہ وسیع تر علاقوں سے مسلسل محروم ہوتی جا رہی ہے۔

رواں برس جولائی میں عراق نے قریب نو ماہ کی جدوجہد کے بعد داعش کے مضبوط گڑھ موصل کا کنٹرول بھی واپس لے لیا تھا۔

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات