1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عراق سے طے شدہ امریکی فوجیوں کا انخلاء دو ہفتے قبل ہی مکمل

امریکہ نے عراق میں اپنے فوجیوں کی تعداد 50 ہزار تک لانے کا مرحلہ طے شدہ پروگرام سے دو ہفتے قبل ہی مکمل کرلیا ہے۔ اس کے لئے 31 اگست کی تاریخ مقرر تھی۔

default

ایک سینیئر امریکی اہلکار کا اس سلسلہ میں کہنا تھا، ’’ہم نے عراق میں موجود امریکی افواج کی تعداد کم کرکے 50 ہزار کر دی ہے تاہم یہ بات واضح رہنی چاہئے کہ ابھی وہاں جنگی آپریشن کا خاتمہ نہیں کیا گیا اور یہ طے شدہ پروگرام کے مطابق 31 اگست کو ہی ختم ہوگا، جب وہاں موجود باقی ماندہ لڑاکا فوج اپنا جنگی آپریشن ختم کرکے دیگر امدادی کاموں میں مصروف ہوجائے گی۔‘‘

USA Militärlager in Irak bei Nadschaf

امریکی فوج کے جنگی آپریشن کو طے شدہ پروگرام کے مطابق رواں ماہ کے اختتام پر ختم ہونا تھا

اس سے قبل این بی سی نیوز نے خبر دی تھی کہ امریکی جنگی یونٹ کی آخری گاڑیاں آج کویت واپس چلی جائیں گی اور اس طرح عراق میں جنگی آپریشنز میں شرکت کرنے والا آخری امریکی فوجی دستہ آج جمعرات کے روز ملک سے رخصت ہوجائے گا۔ اس طرح سابق عراقی صدر صدام حسین کی آمرانہ حکومت کے خلاف شروع کئے جانے والے آپریشن کے سات برس بعد آج یہ واپسی مکمل ہوجائے گی۔

تاہم امریکی انتظامیہ کے اہلکار کے مطابق این بی سی کی رپورٹ قبل از وقت تھی۔ مزید یہ کہ امریکہ کی طرف سے کبھی نہیں کہا گیا کہ عراق میں فوج کی تعداد 50 ہزار تک لانے کے لئے 31 اگست 2010ء کا انتظار کیا جائے گا۔

سرکاری طور پر تو امریکی جنگی آپریشن 31 اگست کو ختم ہونا ہے تاہم تربیت، انتظامی اور دیگر امور کے لئے 50 ہزار امریکی فوجی اگلے برس کے اختتام تک عراق میں تعینات رہیں گے۔

رپورٹ : افسر اعوان

ادارت : عاطف توقیر

DW.COM

ویب لنکس