1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عراق: ستمبر تک بارہ ہزار امریکی افواج کا انحلاء ہوجائے گا

امریکہ چھ ماہ کے اندر بارہ ہزار امریکی افواج کو عراق سے واپس بلا لے گا جب کہ اسی عرصے میں عراق سے چار ہزار برطانوی فوجی بھی بلا لیے جائیں گے۔

default

عراق میں اس وقت امریکی افواج کی تعداد ایک لاکھ چالیس ہزار کے قریب ہے

امریکی افواج کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ عراق سے امریکی افواج کے انخلاء کے بارے میں امریکی صدر باراک اوباما کے اعلان کے بعد اس پر عمل درآمد شروع کیا جا رہا ہے اور ستمبر تک امریکی بریگیڈس کی تعداد چودہ سے کم کرکے بارہ کردی جائے گی۔

Barack Obama Nahost-Reise Irak

صدارتی انتخابات کی مہم کے دوران اوباما عراق گئے تھے ۔ مہم کے دوران انہوں نے عراق سے امریکی فوجیں بلانے کا بار بار وعدہ کیا تھا


واضح رہے کہ عراق میں اس وقت امریکی افواج کی تعداد ایک لاکھ چالیس ہزار کے قریب ہے۔ امریکی صدر اوباما کے اعلان کے مطابق اکتیس اگست دو ہزار دس تک عراق سے امریکی افواج کے ایک بڑے حصّے کو واپس بلا لیا جائے گا اور عراقی سیکیورٹی فورسز کی مدد کے لیے سن دو ہزار گیارہ تک صرف پینتیس سے پچاس ہزار امریکی فوجی عراق میں موجود رہیں گے۔

US-Präsident George W. Bush bei den Truppen in Irak

سابق امریکی صدر جارج بش عراق میں امریکی افواج کے ساتھ


امریکی صدر اوباما کی حکمتِ عملی کے مطابق عراق سے نکالی جانے والی فوج افغانستان میں فوجیوں کی تعداد میں اضافے کے لیے استعمال کی جائے گی۔ گزشتہ ہفتے اوباما نے طالبان عسکریت پسندوں سے نمٹنے کے لیے مزید سترہ ہزار امریکی فوجی افغانستان روانہ کیے تھے۔

سابق امریکی صدر جارج ڈبلیو بش کے عہدِ صدارت میں عراق کے ساتھ کیے گئے ایک معاہدے کی رو سے امریکی افواج دو ہزار گیارہ تک عراق میں رہ سکتی ہیں۔

سن دو ہزار تین میں کیے گئے عراق پر حملے کے بعد سے وہاں ہزاروں کی تعداد میں افراد ہلاک ہوچکے ہیں جن میں ساڑھے چار ہزار غیر ملکی فوجی بھی ہیں۔