1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عراق، خود کُش بم حملوں میں 14 افراد ہلاک، 44 زخمی

عراق میں اتوار کو ایک پولیس چوکی اور شیعہ زائرین کے ایک جلوس پر ہونے والے خود کُش بم حملوں میں کم از کم 14 افراد ہلاک اور درجنوں کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔

default

گزشتہ اگست میں بھی کربلا میں بم حملے ہوئے تھے

یہ حملے عراق کے مغربی اور وسطی علاقوں میں ہوئے۔ اطلاعات کے مطابق عراق کے مغربی صوبے الانبارکے شہر رمادی میں ایک خود کُش بم حملہ آور نے بارود سے بھری گاڑی کوسرکاری دفاترکی عمارتوں کے نزدیک لا کر دھماکے سے اڑا دیا۔ اس کے نتیجے میں 12 افراد ہلاک ہوگئے جن میں چھ پولیس اہلکار بھی شامل تھے۔ پولیس اہلکاروں نے بتایا کہ یہ حملہ عراق کے مقامی وقت کے مطابق صبح 10 بجے رمادی شہر کے مرکز میں قائم ایک پولیس چیک پوسٹ کے نزدیک ہوا۔ بغداد سے مغرب کی طرف 100 کلو میٹر کے فاصلے پر ہونے والے اس خود کُش کار بم حملے کے نتیجے میں کم از کم 44 افراد زخمی ہوئے۔ پولیس اور ہسپتال ذرائع نے اس واقع کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ زخمی ہونے والوں میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔

Irak Wahlen Wahlplakat in Bagdad Ijad Allawi liegt vorne

عراق میں سال رواں میں ہونے والے پارلیمانی انتخابات کے بعد بھی ملک میں امن قائم نہ ہو سکا

الانبار رقبے کے اعتبار سے عراق کا سب سے بڑا صوبہ ہے اور یہ سُنی انتہا پسند عربوں کا گڑھ مانا جاتا ہے۔ اس صوبے کے دارالحکومت رمادی میں عراق پر 2003 ء میں ہونے والے امریکی حملے کے بعد سے سنی بغاوت کا سلسلہ عروج پر رہا ہے۔ تاہم 2006 ء کے بعد سے مقامی قبائلی گروپوں نے امریکی فوج کے ساتھ اتحاد کر لیا اور تب سے وہاں روز مرہ ہونے والے تشدد کے واقعات میں کمی دیکھنے میں آئی۔ یہ صوبہ عراقی دارالحکومت بغداد سے مغرب کی طرف 115 کلو میٹر کے فاصلے پر ہے۔

اُدھر عراقی شہر بعقوبہ میں شیعہ زائرین کے ایک گروپ کو ہدف بناتے ہوئے ایک خود کُش بم حملہ آور نے خود کو بم سے اڑا دیا۔ اس واقع میں دو افراد ہلاک جبکہ تین زخمی ہوئے ہیں۔ بعقوبہ کے سکیورٹی اہلکاروں کے مطابق شعیہ زائرین کا ایک گروپ عاشورہ کے جلوس میں شرکت کے لئے کربلا کی جانب رواں تھا کہ ایک خود کُش بم حملہ آور نے اس گروپ کے نزدیک آکر خود کو دھماکے سے اڑا دیا۔

لا تعداد شیعہ مسلمان ہر سال نواسہ رسول اور آلِ نبی کی قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کرنے اورکربلا کے میدان میں ہونے والے غیر انسانی واقعات کا سوگ منانے کے لئے کربلا میں جمع ہوتے ہیں۔

Irak / Al-Maliki / Talabani

عراقی صدر جلال طالبانی اور وزیر اعظم نوری المالکی

بعقوبہ بغداد سے تقریباً 60 کلو میٹر کے فاصلے پرجبکہ مقدس شہر کربلا اس کے جنوب میں واقع ہے۔ رواں ہفتے کے اواخر تک عاشورہ میں شرکت کے لئے کربلا آنے والے ایک ملین شیعہ زائرین کے جمع ہونے کی توقع کی جا رہی ہے۔ سکیورٹی حکام کے لئے عاشورہ کے موقع پر امن و امان کی صورتحال پر قابو رکھنا ایک بہت بڑا چیلنج ہے۔ گزشتہ سالوں کے دوران خاص طور سے اس موقع پر نکالے جانے والے جلوسوں کو پُر تشدد حملوں کا نشانہ بنایا جاتا رہا ہے۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM

ویب لنکس