1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عراق بذریعہ ایران خام تیل فروخت کر سکتا ہے

کرد ریجن کے ساتھ مذاکرات کی ناکامی کی صورت میں بغداد حکومت خام تیل بذریعہ ایران فروخت کرنے پر غور کرے گی۔ اس تناظر میں کرد اور عراقی حکام کے مابین آئندہ ہفتے مذاکرات منعقد کیے جا رہے ہیں۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے عراقی آئل منسٹری کے ایک اعلیٰ اہلکار کے حوالے سے بتایا ہے کہ اگر اربیل کے ساتھ آئل ریونیو شیئرنگ ڈیل ناکامی کا شکار ہوئی تو بغداد حکومت خام تیل کی فروخت کے لیے ایرانی حکام سے رجوع کرنے پر غور کرے گی۔

DW.COM

عراق کی اسٹیٹ آئل مارکیٹنگ آرگنائزئشن SOMO کی طرف سے بتایا گیا ہے کہ متوقع طور پر آئندہ ہفتے کے دوران کرد ریجنل گورنمنٹ KGR کے ساتھ ترکی کے راستے خام تیل کی فروخت کے بارے میں مذاکرات کیے جائیں گے۔

عراق میں تیل کی وزارت کے نائب وزیر فیاد النیما نے روئٹرز کو بتایا ہے کہ اگر یہ مذاکرات ناکام ہوئے تو بغداد کو کوئی اور راستہ تلاش کرنا ہو گا۔

نیما نے کہا کہ حکومت کو ریونیو کی ضرورت ہے اور اربیل کے ساتھ ڈیل نہ ہو سکی تو ایران یا کسی اور ملک کے راستے تیل فروخت کرنے کے بارے میں سوچا جائے گا۔

عراق سعودی عرب کے بعد تیل کی پیدوار کے حوالے سے اوپیک کا دوسرا سب سے بڑا ملک ہے۔ عراق میں تیل کی فروخت سے مجموعی عوامی اخراجات کا پچانوے فیصد حاصل ہوتا ہے۔

عالمی منڈی میں تیل کی قیمتوں میں کمی اور ملک میں داعش کے خلاف جاری کارروائی کے باعث عراق کو شدید اقتصادی مشکلات کا سامنا ہے۔

عراقی آئل صنعت سے وابستہ ایک اعلیٰ اہلکار نے نام مخفی رکھنے کی شرط پر روئٹرز کو بتایا ہے کہ بغداد حکومت ایران کے ساتھ ڈیل کر سکتی ہے۔ دوسری طرف کرد ریجن یومیہ تقریبا پانچ لاکھ بیرل تیل ترکی کے راستے فروخت کر رہا ہے۔

نیما کے بقول عراق کی سرکاری ’نارتھ آئل کمپنی‘ نے گزشتہ ہفتے ہی کرد ریجن کے زیر انتظام پائپ لائن میں تیل کی ترسیل بحال کر دی ہے، جو اطراف کے مابین اعتماد سازی کا باعث بن سکتی ہے اور اس تناظر میں مذاکراتی عمل کامیاب ہو سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کرکوک سے تیل کی یہ ترسیل دراصل وزیر اعظم حیدر العبادی کی ہدایات پر بحال کی گئی ہے۔

Irak IS Beiji Öl Raffinerie

عالمی منڈی میں تیل کی قیمتوں میں کمی اور ملک میں داعش کے خلاف جاری کارروائی کے باعث عراق کو شدید اقتصادی مشکلات کا سامنا ہے

اس وقت یومیہ پچھتر ہزار بیرل خام تیل کرد ریجن کی پائن لائن کو ترسیل کیا جا رہا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ اگر اریبل اور بغداد کے مابین ڈیل ہو جاتی ہے تو تیل کی ترسیل یومیہ ایک لاکھ بیرل کر دی جائے گی۔

مارچ میں جب اختلافات کے باعث اس پائپ لائن سے تیل کی ترسیل منقطع ہوئی تو عراق اسی پائپ لائن کے ذریعے یومیہ ڈیڑھ لاکھ بیرل تیل فراہم کر رہا تھا۔