1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عراق، ایک خاتون کی جانب سے خودکش حملے میں 54 افراد ہلاک

عراقی دارالحکومت بغداد کے قریب شاب کے مقام پر ایک خودکش حملے میں کم از کم 54 افراد ہلاک ہوگئے ہیں جب کہ سو سے زائد دیگر افراد زخمی ہیں۔ عراقی حکام کے مطابق یہ دھماکہ ایک خاتون خودکش حملہ آور نے کیا۔

default

بغداد کی آپریشنل کمانڈ کے ترجمان میجر جنرل قاسم عطاء کے مطابق امام حسین کے چہلم کے سلسلے میں کربلا جانے والے شیعہ زائرین کے ہجوم میں ایک خاتوں نے خود کو اس وقت دھماکے سے اڑا یا جب ایک چیک پوائنٹ پر خواتین گارڈز کربلا جانے والے قافلے میں شامل خواتین کی تلاشی لے رہی تھیں۔

پولیس حکام مطابق اس دھماکے میں ہلاک ہونے والوں میں 18 خواتین اور 12 بچے بھی شامل ہیں، جبکہ زخمی افراد کی تعداد 117 ہے۔

Irakische Schiiten pilgern wieder nach Kerbala

خودکش دھماکہ کربلا جانے والے زائرین کے درمیان کیا گیا

دھماکے میں زخمی ہونے والے الاوی حسن کے مطابق وہ کربلا جانے والے افراد کی دیکھ بھال میں مصروف تھے جب خواتین کی تلاشی کے لئے بنائے گئے ایک ٹینٹ میں یہ دھماکہ ہوا۔ حسن کے مطابق دھماکے کے نتیجے میں انہوں نے خود کو ہوا میں اڑتے ہوئے محسوس کیا اور بے ہوش ہونے سے قبل انہوں نے بہت سے لوگوں کو زخمی حالت میں دیکھا۔ بعد ازاں انہیں ہسپتال میں ہوش آیا۔

دھماکے کا شکار ہونے والے بیشتر افراد امام حسین کے چہلم کی رسومات میں شرکت کے لئے صوبہ دیالا سے پیدل سفر کرکےکربلا جارہے تھے۔

عراقی وزیراعظم نوری المالکی کے دفتر سے جاری ہونے والے بیان میں اس دھماکے کی ذمہ داری سابق صدر صدام حسین کی حامی بعث پارٹی پر عائد کی گئی ہے۔ بیان میں وزیراعظم نے اس حملے کا ذمہ دار بعث پارٹی اور القاعدہ ارکان کے گٹھ جوڑ کو قرار دیا ہے۔

عراقی وزارت دفاع کے ترجمان جنرل محمد الاکثری کے مطابق خودکش حملہ آور خاتون بغداد کے شمال مشرق میں واقع صوبے دیالا سے آئی تھی، جو کہ ماضی میں القاعدہ کا گڑھ رہا ہے۔ الاکثری کے مطابق اس سے قبل بھی اس صوبے سے تعلق رکھنے والی 25 خواتین خودکش حملے کرچکی ہیں۔

امام حسین کی شہادت کے چہلم کی رسومات کے لئے لاکھوں شیعہ افراد کربلا پہنچتے ہیں۔ اس مرتبہ جمعے کے دن اختتام پزیر ہونے والی ان رسومات کی سیکیورٹی کے سلسلے میں 30 ہزار عراقی سیکیورٹی اہلکاروں کو تعینات کیا گیا ہے۔

Weibliche Pilger und irakische Sicherheitskräfte in Karbala

حضرت امام حسین کے چہلم کے موقع پر سلامتی کو یقینی بنانے کے لئے تیس ہزار اہلکار تعنیات کئے گئے ہیں

جرمنی اور یورپی یونین نے اس دھماکے کی سخت مذمت کی ہے۔ جرمن وزیر خارجہ گیڈو ویسٹرویلے نے یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کی سربراہ کیتھرین ایشٹن کے ساتھ اپنی ملاقات میں اس دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے اسے ہولناک واقعہ قرار دیا۔

اُدھر عراقی صدر طارق الہاشمی امریکہ کے دورے پر واشنگٹن میں ہیں، جہاں امریکی صدر باراک اوباما اور نائب صدر جو بائیڈن نے ان سے ملاقات کی ہے۔ نائب صدر جو بائیڈن کے دفتر سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق اس ملاقات میں مہاجرین کے مسئلے کے علاوہ عراقی سیاسی اور اقتصادی صورتحال پر غور کیا گیا۔

رپورٹ : افسر اعوان

ادارت : شادی خان سیف

DW.COM