1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

عراقی تیل کی نیلامی

عراقی وزیر برائے تیل حسین الشاہ رستانی نے پیر کے روز عراق کی چھ آئل فیلڈز کو نیلام کرنے کا اعلان کیا ہے۔ مزکورہ نیلامی میں تیل کی بین الاقوامی کمپنیاں بھی شرکت کریں گی۔

default

جنوبی موصل میں واقع آئل ریفائنری

عراقی وزیر نے یہ بھی کہا ہے کہ عراق کی قدرتی گیس کے زخائر کے لیے بھی مستقبل قریب میں نیلامی کروائی جائے گی۔


رمیلا، کرکک، زبیر، مغربی قرنا، بائی حسن اور میثن کی آئل فیلڈز کو امریکی حمایت یافتہ عراقی حکومت نے نیلام کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس طرح مغربی ممالک کی طاقت ور تیل کمپنیاں تیل سے لبریز ان کوؤں پر اختیار حاصل کر پائیں گی جو کہ اب تک عراقی حکومت کے اختیار میں تھے۔

عراقی حکومت کے مطابق ابتدائی طور پر اکتالیس بین الاقوامی کمپنیوں کو اس نیلامی میں حصّہ اینے کا اہل قرار دیا گیا ہے مگر امکان یہی ہے کہ شیل، برٹش پیٹرولیم، ایکزون موبل اور ٹوٹال جیسی کمپنیوں کے ہوتے کسی اور کمپنی کے نیلامی میں جیتنے کے امکانات نہ ہونے کے برابر ہیں۔ یہ بات روزِ روشن کی طرح عیاں ہے کہ مزکورہ کمپنیاں کئی ممالک کی مشترکہ دولت سے بھی زیادہ وسائل کی حامل ہیں اور اسی مناسبت سے اثرو رسوخ بھی رکھتی ہیں۔

Chevron Firmenlogo

بین الاقوامی تیل کمپنیاں کئ ممالک کے مشترکہ وسائل سےبھی زیادہ وسائل اور اثرورسوخ رکھتی ہیں


مگر عراقی حکومت نے پیر کے روز جب نیلامی کی تفصیلات پیش کیں تو ان کے مطابق بین الاقوامی کمپنیوں کے کنٹرول میں آنے کے بعد عراقی تیل کی پیداوار میں اضافہ ہوگا اور یہ پیداوارایک عشاریہ پانچ ملین بیرلز یومیہ تک پہنچ جائے گی۔ یہ بات اس لیے بھی درست ہے کہ ان آئل فیلڈز کو جدید تقاضوں کے مطابق ڈھالنے اور زیادہ سے زیادہ تیل نکالنے کے لیے جو زرائع درکار ہیں وہ بین الاقوامی تیل کمپنیوں کے ہی پاس ہیں۔


تیل کے کوؤں کی نیلامی اس سے قبل اس واسطے عمل میں نہیں آ سکی کہ عراق میں تشدّد کے واقعات نے حکومت کی تمام تر توجہ اپنی جانب مبذول کروائے رکھی۔ گزشتہ ایک برس میں عراق کی مجموعی صورتِ حال میں نسبتاً بہتری رونما ہوئی ہے او ر تشدّد کے واقعات میں بھی خاطر خواہ کمی واقع ہوئی ہے۔ اسی صورتِ حال کا فائدہ اٹھاتے ہوئے غالباً عراقی حکومت نے تیل کی نیلامی کا فیصلہ کیا ہے۔

US-Präsident George W. Bush bei den Truppen in Irak

امریکی حکومت کا دعویٰ ہے کہ گزشتہ ایک برس میں امریکی افواج کی جارحانہ حکمتّ عملی کے سبب عراق میں پر تشدّد واقعات میں کمی واقع ہوئی ہے


اب تک اس نیلامی کے ممکن نہ ہونے کی ایک وجہ کردستان کی علاقائی حکومت اور بغداد میں وفاقی حکومت کے درمیان تیل کے کانٹریکٹس اور دولت کی تقسیم کے بارے میں تنازعہ بھی تھی۔ اب وفاقی حکومت نے یہ فیصلہ کیا ہے کہ مناسب قانون نہ ہونے کی صورت میں وہ سن دوہزار تین میں امریکی قبضے سے قبل ایک قانون پر عمل درآمد کرتے ہوئے کمپنیوں کے ساتھ قلیل و طویل مدت معاہدے کرے گی۔

Schiitischer Geistlicher Muqtada al-Sadr

شیعہ عسکری رہنما مقتدہ الصدر عراق کی خود مختاری کے علم بردار ہونے کا دعویٰ کرتے ہیں


بظاہر عراقی تیل کی نیلامی کا معاملہ اتنا پیچیدہ نظر نہیں آتا مگر سیاسی اور معاشی تجزیہ نگار اس بات کی طرف امریکی قبضے کے وقت سے اشارہ کر رہے ہیں کہ امریکہ کے عراق پر قبضے کی ایک بڑی وجہ عر اقی تیل پر قبضہ ہی تھی اور تجزیہ نگاروں کا یہ بھی کہنا ہے کہ اسلامی انتہا پسندی اور فرقہ واریت کے نام پر جو مزاحمت عراق میں جاری ہے اس کی ایک بڑی وجہ بھی مختلف گروہوں کی تیل کی دولت پر قبضے کی کوشش ہے۔ یہی وجہ ہے کہ مزاحمت بھی ان شیعہ اکثریتی علاقوں میں ہو رہی ہے جو تیل کی دولت سے مالا مال ہیں۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ تیل کی دیو قامت کمپنیوں کی آمد کے ساتھ یہ مزاحمت کیا رخ اختیار کرتی ہے۔