1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

عالمی یوم خوراک: ہر چھٹا انسان بھوکا سوتا ہے

آج منائے جانے والے عالمی یومِ خوراک کے موقع پر صورتِ حال یہ ہے کہ دنیا میں ہر چھٹے انسان کے پاس اُتنی خوراک نہیں ہے، جتنی کہ اُسے ضرورت ہے۔

default

خوراک کی عالمگیر صورتِ حال کے حوالے سے اقوامِ متحدہ کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ اِس سال دُنیا میں بھوک کے شکار انسانوں کی تعداد پہلی مرتبہ ایک ارب کی حد کو پار کر گئی۔ اٹلی کے دارالحکومت روم سے ڈوئچے ویلے کے تبصرہ نگار گریگور ہوپے کے مطابق بھوک کے خاتمے کے سلسلے میں سیاسی عزم کا فُقدان پایا جاتا ہے۔

Nordkoreanische Arbeiter

عالمی ادارہٴ خوراک کے ڈائریکٹر جنرل ژاک دِیوف نے ایک تلخ اور بے رحمانہ حقیقت کو ہدفِ تنقید بناتے ہوئے کہا ہے کہ دُنیا سے بھوک کو ہمیشہ ہمیشہ کے لئے ختم کرنے کے حوالے سے سیاسی عزم اور ارادے کی کمی پائی جاتی ہے۔ اقوامِ متحدہ کے خوراک اور زراعت کے ادارے اور عالمی خوراک پروگرام کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ دنیا میں بھوک کا سامنا کرنے والے اور انتہا درجے کی غذائی قلت سے دوچار انسانوں کی تعداد میں گذشتہ دَس برسوں سے مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔

تازہ ترین بحران نے اِس اضافے کی شدت اور بڑھا دی ہے۔ دَس سال پہلے روم میں بھوک کے مسئلے پر منعقد ہونے والی مشہور سربراہ کانفرنس کے فیصلوں کو تین سال ہو چکے تھے۔ تب سن 2015ء تک پوری دُنیا میں بھوک کے شکار انسانوں کی تعداد میں نصف کمی کا ہدف طے کیا گیا تھا۔ یہ نصب العین سننے میں اچھا تھا لیکن اِسے جلد ہی فراموش کر دیا گیا۔

Frau mahlt Korn in Angola

عالمی ادارہٴ خوراک ایف اے او کا موقف درست ہے کہ بحران کسی بھی قسم کا اور کتنا ہی سنگین کیوں نہ ہو، امیر ممالک حیرت انگیز پھرتی اور اتفاق کے ساتھ اُس کا حل ڈھونڈنے کی کوشش کرتے ہیں۔ دہشت گردی، بینکوں کے بحران یا پھر موسمیاتی تبدیلیوں کے معاملے میں تو امیر ممالک فوراً حرکت میں آ جاتے ہیں لیکن بھوک کے باعث لاکھوں انسانوں کے موت کا شکار ہو جانے کے یہ ملک عادی ہو چکے ہیں۔ تب کہا جاتا ہے کہ ہاں، یہ معاملہ سنگین تو ہے لیکن اِس میں ابھی انتظار کیا جا سکتا ہے۔ وجہ یہ ہے کہ برلن ہو یا برسلز، وہاں ایشیا اور افریقہ کے بھوکے انسانوں کی کوئی لابی نہیں، اُن کے حق میں کوئی آواز بلند کرنے والا نہیں۔

BdT Pakistan Welternährungstag Mädchen auf dem Markt in Lahore

ایف اے او نے حساب لگایا ہے کہ اگر ہم یہ چاہیں کہ سن 2050ء میں بھی عالمی آبادی کے پاس کھانے کے لئے کافی خوراک ہو تو دنیا بھر میں غریب ممالک کے زرعی شعبوں کو سالانہ چوالیس ارب ڈالر کی امداد دینا ہو گی۔ یہ رقم اُس رقم کا دَسواں حصہ بھی نہیں ہے، جو وفاقی جرمن حکومت نے بینکوں کو بچانے کے امدادی پیکیج کے لئے مختص کی ہے۔ مطلب یہ کہ بھوک کا خاتمہ ممکن ہے، بس سیاسی عزم کی ضرورت ہے۔ اُمید کی جا سکتی ہے کہ نومبر میں روم میں اَشیائے خوراک کی فراہمی کو یقینی بنانے کے موضوع پر منعقدہ سربراہ کانفرنس میں عالمی رہنما بھوک کے خلاف جنگ کا اعلان کریں گے۔

تبصرہ: امجد علی

ادارت: عدنان اسحاق