1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

عالمی کپ کرکٹ کا فائنل، ٹکٹوں کی فروخت پر عوام ناراض

بھارت میں عالمی کپ کی انتظامی کمیٹی کے اس اعلان کے بعد کہ فائنل میچ کی صرف چار ہزار ٹکٹیں براہ راست فروخت کی جائیں گی، بھارتی عوام نے اپنے سخت غم وغصے کا اظہار کیا ہے۔

default

ورلڈ کپ کرکٹ کا فائنل دو اپریل کو ممبئی میں کھیلا جائے گا۔ ممبئی کا سٹیڈیم بھارت کے چند چھوٹے سٹیڈیمز میں شمار کیا جاتا ہے۔ اور اب پیر کو اس اعلان کے بعد کہ انتظامیہ اس فائنل میچ کی براہ راست صرف چار ہزار ٹکٹیں فروخت کرے گی، بھارتی عوام نے اپنے سخت غم وغصے کا اظہار کیا ہے۔

عالمی کپ کرکٹ 2011ء کے مقابلوں کے آغاز سے قبل ہی ممبئی کا وانکھیڑے سٹیڈیم، آگ بجھانے سے متعلق قوانین کے مطابق پورا نہ اترنے پر سخت تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا تھا۔ جس کے نتیجے میں بعد ازاں وہاں تماشائیوں کے داخلے کی تعداد کم کر کے تینتیس ہزار کر دی گئی ہے۔ اس سے قبل وانکھیڑے سٹیڈیم میں اڑتیس ہزار تماشائیوں کے بیٹھنے کے انتظامات کیے گئے تھے۔

Eden Gardens

کولکتہ کا ایڈن گارڈنز سٹیڈیم

اس ٹورنامنٹ کے ڈائریکٹر رتناکر شیٹھی نے عوام کے غصے کے جواب میں خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ ان کی مجبوریاں ہیں، اس لیے فائنل میچ کے لیے براہ راست فروخت کی جانے والی ٹکٹوں کی تعداد چار ہزار رکھی گئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ممبئی کرکٹ ایسوسی ایشن سے تعلق رکھنے والے مختلف کلبوں کے لیے قریب بیس ہزار ٹکٹیں مختص کی گئی ہیں جبکہ بھارتی کرکٹ بورڈ، بین الاقوامی کرکٹ کونسل کو ساڑھے آٹھ ہزار ٹکٹیں دے رہا ہے۔

شیٹھی نے کہا ہے کہ عوام کو مایوس نہیں ہونا چاہیے کیونکہ کلبوں یا بین الاقوامی کرکٹ کونسل کو دی جانے والی ٹکٹیں وہ بھی خرید سکتے ہیں۔

تاہم ان تمام تر تاویلات کے باوجود بھارتی عوام کا غصہ ٹھنڈا نہیں ہوا ہے۔ انہوں نے اس کو مضحکہ خیز قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر یہی ہونا تھا تو عالمی کپ کا فائنل میچ بھارت میں منعقد ہی کیوں کروایا جا رہا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ میچ کولکتہ کے ایڈن گارڈنز سٹیڈیم میں منعقد کیوں نہیں کروایا جا رہا، جہاں 65 ہزار تماشائی سٹینڈز میں بیٹھ کر میچ دیکھ سکتے ہیں۔ کئی افراد نے تو اسے انتظامیہ کی ناکامی قرار دے دیا ہے۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: عدنان اسحاق

DW.COM