1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عالمی مالیاتی ادارے میں اصلاحات پر اتفاق

جی ٹوئنٹی گروپ عالمی مالیاتی فنڈ کے انتظامی ڈھانچے میں دور رس اصلاحات پرمتفق ہوگیا ہے۔ ان اصلاحات کا مقصد بھارت اورچین جیسی ابھرتی ہوئی معیشتوں کواس عالمی ادارے میں فیصلہ سازی کے لئے زیادہ اہمیت دینا بتایا گیا ہے۔

default

آئی ایم ایف کے مینیجنگ ڈائریکٹر ڈومینیک سٹراؤس کاہن، سفارت کاروں سے گفتگو کرتے ہوئے

شمالی کوریا میں منعقد ہوئے ترقی یافتہ اور ابھرتی ہوئی معیشتوں کے گروپ جی بیس کے اس اجلاس میں متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ عالمی مالیاتی فنڈ آئی ایم ایف میں فیصلہ سازی کے لئے ابھرتی ہوئی معیشتوں کو زیادہ حقوق دئے جائیں گے۔

مبصرین کے مطابق سن 1945ء میں آئی ایم ایف کی تخلیق کےبعد پہلی مرتبہ تاریخی اصلاحات عمل میں لائی گئی ہیں، جس کے تحت اس مالیاتی ادارے میں یورپی ممالک کا اثرو رسوخ ، ترقی پذیر ممالک کے مقابلے میں کم ہو جائے گا۔

سیول کے جنوب میں 370 کلو میٹر کے فاصلے پر واقع Kyongju میں منعقد ہوئے اس دو روزہ اجلاس کے دوران ہونے والی پیش رفت پرعالمی رہنماؤں نے مُسرت کا اظہار کیا ہے۔ جرمن وزیر اقتصادیات ’رائینر بُروڈرلے‘ نے کہا کہ کہ آئی ایم ایف میں لائی جانے والی یہ اصلاحات تاریخی نوعیت کی ہوں گی۔

آئی ایم ایف کے مینیجنگ ڈائریکٹر ڈومینیک سٹراؤس کاہن اور ورلڈ بینک کے صدر رابرٹ زوئلک کی طرف سے پیش کردہ مجوزہ اصلاحات کی حتمی منظوری کے لئے اس ادارے کے 187 اراکین ممالک کی تائید ضروری ہے تاہم ان اصلاحات کی منظوری اس لئے یقینی معلوم ہوتی ہے کیونکہ اس سلسلے میں 80 فیصد ووٹنگ کے حقوق جی بیس گروپ کے پاس ہی ہیں۔

Flash-Galerie G20 Finanzministertreffen in Südkorea

شمالی کوریا منعقدہ جی بیس گروپ کے اجلاس میں شامل سفارت کاروں کی گروپ فوٹو

گزشتہ کئی سالوں سے زیر بحث اس اصلاحاتی مسودے کی منظوری کے بعد سن 2011ء سے ان پرعملدرآمد ممکن ہو سکے گا۔ مجوزہ اصلاحات کے مطابق آئی ایم ایف کے اندر فیصلہ سازی کے قریب چھ فیصد حقوق چین کو دئے جائیں گے جبکہ فیصلہ سازی کےلئے پانچ فیصد ووٹ برازیل اور بھارت کے حصے میں آئیں گے۔

اسی اثناء میں عالمی مبصرین نے چین کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ بیجنگ حکومت اپنی کرنسی کی قدر میں کمی کرتے ہوئے تجارت میں فائدے حاصل کر رہی ہے۔ انہوں نے خبردار کیا کہ معاشی بحالی کا یہ طریقہ کار خطرناک ہو سکتا ہے۔ دوسری طرف امریکی وزیر خزانہ ٹموتھی گائتھنر نے چین کا نام لئے بغیر ترقی پذیر ممالک پر زور دیا کہ وہ اپنی کرنسیوں کو مستحکم بنائیں تاکہ عالمی اقتصادی بحالی کو تیز تر بنایا جا سکے۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: کشور مصطفےٰ

DW.COM