1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عالمی برادری کی جانب سے آبوجہ بم دھماکے کی مذمت

نائجیریا کے دارالحکومت آبوجہ میں اقوام متحدہ کے دفتر پر کیے گئے کار بم دھماکے کی مذمت عالمی سطح پر کی جا رہی ہے۔ جمعہ کو ہونے والے اس خود کش حملے میں کم از کم اٹھارہ افراد کی ہلاکت ہوئی تھی۔

default

نائجیریا کے سکیورٹی حکام نے مقامی انتہاپسند مسلمان تنظیم بوکو حرام پر اس حملے میں ملوث ہونے کا شبہ ظاہر کیا ہے۔ اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے ہلاکتوں پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اپنے مذمتی بیان میں کہا کہ یہ حملہ ان افراد پر کیا گیا ہے جو دوسروں کی مدد میں مصروف ہیں۔ بان کی مون نے اس خدشے کا اظہار کیا ہے کہ ہلاکتوں میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل کا یہ بھی کہنا تھا کہ عالمی ادارے پر مسلسل حملوں سے ایسا دکھائی دیتا ہے کہ اس ادارے کی عمارتیں اور ملازمین دہشت گردوں کے لیے آسان ہدف ہیں لیکن ان حملوں سے ان کے کارکنوں کی حوصلہ شکنی نہیں کی جا سکتی۔

ناروے نے بھی اس حملے کی مذمت کی ہے۔ ہلاک شدگان میں ناروے کی تیس سالہ خاتون وکیل Ingrid Midtgaard بھی شامل ہے جو اقوام متحدہ کی ملازمہ تھی۔ ناروے کے دارالحکومت اوسلو سے وزیر خارجہ Jonas Gahr Store  نے اس حملے پر شدید رنج کا اظہار کیا۔ ان کے بیان میں کہا گیا کہ ایسے پرتشدد حملے کسی طور قابل قبول نہیں ہو سکتے اور ناروے ہر قسم کی دہشت گردی کی مذمت کرتا ہے۔

Flash-Galerie Anschlag Nigeria UN-Gebäude

آبوجہ میں یو این کمپاؤنڈ پر خود کش حملہ کیا گیا

برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون نے اس حملے کے بعد نائجیریا کے صدر گُڈ لک جوناتھن کے ساتھ ٹیلی فون پر اظہار افسوس کرتے ہوئے ہر ممکن تعاون کا اظہار کیا۔ برطانوی وزیر اعظم نے اس حملے کو گھناؤنا فعل قرار دیا۔ کیمرون کا یہ بھی کہنا تھا کہ برطانیہ اور نائجیریا کو مسلمان انتہاپسندی کا سامنا ہے۔

ادیس ابابا میں افریقی یونین کی جانب سے بھی اس خود کش حملے کی شدید مذمت کی گئی ہے۔ یونین کے بیان میں کہا گیا کہ ایسے حملے قابل نفرت اور مجرمانہ رویوں کے عکاس ہوتے ہیں اور ان کو کسی طور درست خیال نہیں کیا جا سکتا۔

برطانوی دارالحکومت لندن میں قائم رسک ایڈوائزری گروپ Janusian Risk   کے ہنری ولکنسن کا کہنا ہے کہ اس حملے کے بعد یورپی ممالک کے اداروں اور کاروباری حضرات کو اس خطرے کی نوعیت اور شدت کا ازسر نو جائزہ لینا ہو گا۔ ولکنسن کے مطابق اقوام متحدہ کی عمارت کو نشانہ بنانے سے ایسا دکھائی دیتا ہے کہ جو بھی گروپ اس میں ملوث ہے وہ القاعدہ سے براہ راست متاثر ہے۔

نائجیریا کے صدر گڈ لک جونا تھن نے اس خود کش کارروائی کو اخلاقی اعتبار سے انتہائی قابل نفرت قرار دیا۔ صدر جوناتھن نے سارے ملک میں عمومی طور پر اور دارالحکومت میں خاص طور پر سکیورٹی کو سخت کرنے کا حکم بھی جاری کیا ہے۔

 

رپورٹ:  عابد حسین

ادارت:  ندیم گِل

DW.COM

ویب لنکس