1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

عالمی امن کوششیں ناکام، اسد فورسز کا حلب پر بڑا حملہ شروع

شام میں جنگ بندی اور قیام امن کے لیے نیویارک میں بیس رکنی گروپ آئی ایس ایس جی کے مذاکرات ناکام ہو گئے ہیں۔ اسی دوران شامی فوج نے محصور شہر حلب میں موجود باغیوں کے خلاف ایک بڑا حملہ شروع کر دیا ہے۔

US-Außenminister John Kerry Staffan de Mistura und Sergey Lavrov

انٹرنیشنل سیریا سپورٹ گروپ (ISSG) کے اجلاس میں شریک امریکی اور روسی وزرائے خارجہ اور اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب برائے شام اسٹیفن ڈے مِستورا (دائیں)

نیوز ایجنسی روئٹرز نے نیویارک سے اپنے ایک جائزے میں بتایا ہے کہ امریکا اور روس شام میں محض چند ہی روز جاری رہنے والی جنگ بندی کو بحال کروانے میں ناکام ہو گئے ہیں۔ امریکا، روس اور دیگر اہم طاقتوں پر مشتمل انٹرنیشنل سیریا سپورٹ گروپ (ISSG) کا اجلاس جمعرات کو نیویارک میں ہوا، جہاں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کا سالانہ اجلاس بھی جاری ہے۔

امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے حلب پر شامی فوج کے نئے بڑے حملے کے اعلان پر تشویش ظاہر کی اور کہا:’’ہم نے روسیوں کے ساتھ تبادلہٴ خیال کیا ہے اور زیرِ بحث نکات پر ہم کل پھر سے بات کریں گے۔ مَیں آج بھی اتنا ہی پُر عزم ہوں، جتنا کہ کل تھا لیکن آج مَیں زیادہ جھنجھلایا ہوا ہوں۔‘‘

شام میں قیام امن کے مذاکراتی عمل کی بحالی کے لیے امریکا اور روس کے درمیان نو ستمبر کو شام بھر میں جنگ بندی کا ایک سمجھوتہ ہوا تھا، جس میں جنگ زدہ علاقوں میں پھنسے شہریوں تک اَشیائے ضرورت پہنچانے کے ساتھ ساتھ القاعدہ سے جڑے گروپوں یا دیگر کالعدم انتہا پسند گروہوں کے خلاف مشترکہ فوجی آپریشنز کا بھی امکان ظاہر کیا گیا تھا۔ پیر کے روز ایک امدادی قافلے پر حملے میں بیس افراد کی ہلاکت کے بعد یہ سمجھوتہ عملاً ختم ہو گیا تھا۔

شام کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب اسٹیفن ڈے مِستورا نے جنگ بندی ڈیل کی بحالی کے لیے مذاکرات جاری رکھنے پر امریکا اور روس کے اتفاق رائے کا خیر مقدم کیا تاہم انہوں نے نیویارک میں منعقدہ اجلاس کو ’طویل، تکلیف دہ، مشکل اور مایوس کُن‘ قرار دیا۔

کیری نے مطالبہ کیا تھا کہ روس اور شامی حکومت جنگ زدہ علاقوں کے اوپر پروازیں فوری طور پر روک دیں تاہم جیسا کہ اس اجلاس میں شریک جرمن وزیر خارجہ فرانک والٹر شٹائن مائر نے بتایا کہ اس تجویز کی وسیع تر حمایت کے باوجود اس پر اتفاق نہ ہو سکا۔ امریکا کا موقف ہے کہ اب گیند روس کی کورٹ میں ہے اور یہ کہ کوئی بھی جنگ بندی ڈیل روس کے سنجیدہ تعاون کے بغیر ممکن نہیں۔

Syrien Zerstörung in Aleppo

شامی فوج نے حلب میں موجود باغیوں کے خلاف اپنی بڑی عسکری کارروائی شروع کر دی ہے

اُدھر شامی فوج نے حلب میں محصور باغیوں کے خلاف اپنا آپریشن شروع کر دیا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ اب تک چَودہ نئے فضائی حملوں کے علاوہ فاسفورس بم بھی برسائے گئے ہیں، جن میں چالیس افراد کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔ حلب کے مشرقی حصے پر شامی صدر بشار الاسد کے مخالفین کا قبضہ ہے جبکہ شہر کا بقیہ حصہ اور تمام اہم گزرگاہیں دمشق حکومت کے زیر اثر ہیں۔