1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

عالمی اقتصادی اور سماجی فورمز کا اختتام

یورپی ملک سوئٹزر لینڈ کے شہر ڈاووس میں عالمی اقتصادی فورم کا اختتام پہلی فروری کو ہوا اور اُسی روز برازیل میں جاری عالمی سماجی فورم بھی اپنی منزل کو پہنچ گیا۔

default

برازیل کے شہر بیلم میں عالمی سماجی فورم کے شرکاء کا ایک منظر

عالمی اقتصادی فورم میں اگر شرکاء اِس یقین کے ساتھ اپنے اپنے گھروں کو گئے کہ دنیا بھر کی اقتصادیات کو پریشان کر رکھنے والے عالمی مالیاتی بحران سے نمٹنے کے لئے قریبی تعاون کیا جائے گا اور عالمی بینکاری کے نظام کے اندر نئی روح پھونکنے کی بھی کوشش جاری رکھی جائے گی تو برازیل کے شہر بیلم میں بائیں بازو کے افراد اِس یقین پر منتشر ہوئے کہ عالمگیریت اپنی موت آپ مر رہی ہے۔

World Economic Forum Davos Steve Howard

ورلڈ اکنامک فورم کے ایک سیشن کے شرکاء

یورپ کے ملک سوئٹزرلینڈ کے شہر ڈاووس میں ہر سال عالمی اقتصادی فورم کی سالانہ میٹنگز میں دنیا کے کئی ملکوں کے سربراہوں کے ساتھ اہم تجارتی اور کاروباری حلقوں کی شخصیات بھی مختلف الموضوع سیشن میں شرکت کرتی ہیں۔

Kanzlerin Angela Merkel Davos Weltwirtschaftsforum

ورلڈ اکنامک فورم کے ایک سیشن میں شریک جرمن چانسلر انگیلا میرکل

اٹھائیس جنوری سن دو ہزار نو سے شروع ہونے والی اِس بار کی سالانہ میٹنگ میں پاکستان کے وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کے ہمراہ چالیس کے قریب عالمی لیڈروں نے شرکت کی۔ اِن کے علاوہ دو سو پچاس اہم شخصیات بھی شریک تھیں جن کا تعلُق مالیاتی اور کاروباری اداروں سے تھا۔

Weltwirtschaftsforum Davos Syed Yousuf Raza Gillani

ورلڈ اکنامک فورم میں پاکستانی وزیر اعظم یوسٹ رضا گیلانی

پاکستان اور اُس کے ہمسائے کے نام سے ایک خصوصی سیشن کا اہتمام تھا جس میں پاکستانی وزیر اعظم مہمانِ خصوصی تھے۔ اِس سیشن میں پاکستان کو درپیش مسائل اور اُس کے اپنے ہمسایوں سے روابط پر مقررین نے اظہار خیال کیا۔

Erdogan tritt verärgert vom Podium in Davos

ورلڈ اکنامک فورم کے ایک سیشن میں مناسب وقت نہ ملنے پر ترک وزیر اعظم رجب طیب ایردوہان سیشن چھوڑ کر جاتے ہوئے۔

عالمی اقتصاادی فورم کی سالانہ میٹنگ پانچ دنوں پر پھیلی تھی۔ جس میں کئی موضوعات کو سمونے کی کوشش کی گئی تھی۔ بے شمار سیشنوں میں یوں تو بے شمار موضوع تھے لیکن عالمی مالیاتی بحران ہر حوالے سے سالانہ میٹنگ پر چھایا رہا۔ جرمنی کی چانسل اینگلا میرکل نے اِس میٹنگ میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی طرز پر ایک اقتصادی کونسل کا تصور پیش کیا جو اقوام کی اقتصادیات کو مسلسل نگاہ میں رکھے۔ ایک سیشن میں ترک وزیر اعظم رجب طیب ایردوہان بحث کے دوران گفتگو کے لئےمناسب وقت نہ ملنے پر میٹنگ چھوڑ کر اپنے وطن لوٹ گئے جہاں اُن کا شاندار استقبال کیا گیا۔

Weltsozialforum Brasilien Demonstration

ورلڈ سوشل فورم کے شرکاء ایک مظاہرے میں شرکت کرتے ہوئے۔

دوسری جانب برازیل کے صوبے پارا میں دنیا کے سب سے بڑے دریا ایمزون کے وسیع و عریض دہانے پر واقع شہر بیلم میں دنیا بھر سے ایک لاکھ تینتیس ہزار افراد نے عالمی سماجی فورم کی سالانہ میٹنگ میں شرکت کی۔ چھ روزہ فورم اب ایک بین الاقوامی فورم کی شکل اختیار کرچکا ہے۔ اِس کی ابتدا سن دو ہزار ایک سے ہوئی تھی لیکن اب یہ ایک اہم عالمی ایونٹ بن چکا ہے۔ اِس میں مذہبی تنظیموں کے ہمراہ عائلی آرگنائزیشن کے ساتھ ساتھ ہزاروں دانشوروں اور غیر سرکاری تنظیموں کے نمائندوں نے شرکت کی۔ اِس کو عالمی سطح پر بائیں بازو کے نظریات کے حامل افراد کا سب سے بڑا اجتماع تصور کیا جاتا ہے۔

عالمی سماجی فورم میں شرکاء نے برملا کہا کہ وہ جدید عالمگیریت کے خلاف جمع ہیں جو عالمی مالیاتی بحران کے باعث دم توڑنے والی ہے۔ سماجی فورم میں اِس بارشرکاء نے امریکی صدر باراک اوبامہ پر خصوصی توجہ مرکوز کر رکھی تھی اور اُن کو ایک نئی صبح سےبھی منسلک کیا گیا۔

سن دو ہزار نو کے عالمی سماجی فورم میں وینز ویلا، برازیل،بولیویا، پیرا گوئے اور ایکواڈور کے سربرہان نے بھی شرکت کی۔