1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

طلبہ کی بس کو حادثہ، تفریحی دورہ موت کا سفر ثابت ہوا

پاکستانی شہر چکوال کے قریب موٹر وے پر طلبہ سے بھری بس کو حادثہ پیش آنے کے باعث کم از کم 37 افراد ہلاک ہوگئے ہیں، جن میں سے زیادہ تر اسکول کے بچے ہیں۔

default

فیصل آباد کے ایک پرائیویٹ اسکول کے بچے تفریحی دورے سے واپس جا رہے تھے جب کلر کہار کے قریب ایک موڑ کاٹتے ہوئے بس کھائی میں جا گری۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق یہ حادثہ بریک فیل ہونے کے باعث پیش آیا۔

جائے حادثہ پر موجود چکوال پولیس کے ایک سینئر اہلکار چوہدری سلیم نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ اس حادثے میں اسکول کے 24 طلبہ سمیت کم از کم 30 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ چوہدری سلیم کے مطابق بریک فیل ہونے کے باعث پیش آنے والے اس حادثے میں 55 دیگر افراد زخمی بھی ہیں: ’’ہمیں اب تک 24 لاشیں ملی ہیں، جبکہ چھ سے آٹھ دیگر لاشیں قریبی ہسپتال پہنچائی گئی ہیں۔‘‘

بدقسمت بس کو حادثہ دارالحکومت اسلام آباد سے قریب 100 کلومیٹر کے فاصلے پر کلر کہار کے علاقے میں پیش آیا

بدقسمت بس کو حادثہ دارالحکومت اسلام آباد سے قریب 100 کلومیٹر کے فاصلے پر کلر کہار کے علاقے میں پیش آیا

موٹر وے پولیس کے ایک اور اہلکار نے اے ایف پی کو بتایا کہ 26 افراد موقع پر ہی جاں بحق ہوگئے تھے جن میں سے 22 طلبہ تھے۔ اس اہلکار کے مطابق بس کا ڈرائیور، اس کا مددگار اور اسکول کا وائس پرنسپل ہلاک ہونے والوں میں شامل ہیں۔

 پاکستانی ڈان نیوز کے مطابق ہلاکتوں کی تعداد 45 ہو گئی ہے۔ ہلاک ہونے والے طلبہ کی عمر 12 سے 20 سال کے درمیان ہے۔ ڈان نیوز کے مطابق حادثے کا شکار ہونے والی بس پر طلبہ سمیت 110 کے قریب افراد سوار تھے۔

امدادی کارکنوں کے مطابق اسلام آباد- لاہور موٹر وے پر کلر کہار کے جس مقام پر یہ حادثہ ہوا، وہاں خطرناک موڑ ہونے کے باعث 30 سے 40 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار مقرر ہے۔

رپورٹ: افسر اعوان / خبر رساں ادارے

ادارت: شامل شمس

 

DW.COM