1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

طرابلس پر نئے فضائی حملے، قذافی حکومت جنگ بندی پر تیار

ليبيا کے دارالحکومت ميں آج صبح قذافی کے رہائشی کمپاؤنڈ کے علاوہ شہر کے دوسرے حصوں سے بھی کئی شديد دھماکوں کی آوازیں سنی گئیں۔ باغيوں نے طرابلس کو پٹرول فراہم کرنے والی زاويہ شہر کی ريفائنری پر قبضے ۔کا دعویٰ کيا ہے۔

ليبيا کے باغی شہر الزاويہ ميں

ليبيا کے باغی شہر الزاويہ ميں

ليبيا کے دارالحکومت طرابلس ميں آج صبح شديد دھماکے سنے گئے، جہاں معمر قذافی کی حکومت نے فوری جنگ بندی کا مطالبہ کيا ہے اور باغيوں نے طرابلس سے 40 کلوميٹر کے فاصلے پر ايک اہم آئل ريفائنری پر قبضے کا دعوٰی بھی کيا ہے۔

طرابلس ميں يہ دھماکے شہر کے مرکزی حصے ميں، جہاں قذافی کا رہائشی کمپاؤنڈ ہے، اور شہر کے مغرب ميں بھی کئی حصوں ميں سنے گئے۔ عينی شاہدين کا کہنا ہے کہ کل جمعرات کو بھی نيٹو کے جنگی طياروں نے مرکزی طرابلس اور تاجورہ کے مشرقی مضافاتی علاقے پر بمباری کی تھی، جو آج جمعہ کو بھی جاری رہی۔

ليبيا کی خواتين کا مظاہرہ

ليبيا کی خواتين کا مظاہرہ

باغی مغرب ميں تيونس کے ساتھ طرابلس حکومت کی سپلائی لائنوں کو منقطع کرنے کے ساتھ ساتھ مشرق ميں قذافی کے آبائی شہر سرت سے بھی ضروری اشياء کی فراہمی روک دينا چاہتے ہيں۔ اُنہيں توقع ہے کہ اس طرح وہ طرابلس میں حکمرانوں کی ناکہ بندی کر ديں گے، جس کے نتيجے ميں دارالحکومت ميں قذافی انتظامیہ سے وفاداری ترک کرنے کے واقعات دیکھنے میں آئیں گے اور بغارت پھوٹ پڑے گی۔

باغيوں نے کل جمعرات کو یہ بھی کہا تھا کہ انہوں نے زاويہ شہر ميں آئل ريفائنری پر قبضہ کر ليا ہے، جو طرابلس کو تيل کی فراہمی کا کليدی ذريعہ ہے۔ يہ شہر طرابلس کی طرف باغيوں کی پيش قدمی کے راستے ميں آخری بڑی رکاوٹ ہے۔

تاہم ليبيا کے وزير اعظم بغدادی محمودی نے باغيوں کے اس دعوے کی سختی سے ترديد کرتے ہوئے کہا ہے کہ زاويہ کی آئل ريفائنری مکمل طور پر قذافی کی حامی فوج کے قبضے ميں ہے۔ محمودی نے طرابلس ميں صحافيوں سے باتيں کرتے ہوئے يہ بھی کہا: ’’فوری جنگ بندی کا وقت آ گيا ہے۔ ہم بحران کو فوری طور پر ختم کرنے کے ليے بات چيت پر رضامند ہيں۔‘‘ باغيوں کی قومی عبوری کونسل کے ايک رکن وحيد کے بقول اس ہفتے چند حکومتی اراکین اور باغيوں کے نمائندوں کے درميان تيونس ميں بات چيت ہوئی ہے۔

اسی دوران سابق فرانسیسی وزير خارجہ دے ویلپاں نے تصدیق کی ہے کہ وہ بھی قذافی حکومت کے اراکين سے بات چيت کرنے تيونس گئے تھے۔ اُنہوں نے کہا کہ وہ ان مذاکرات کی کاميابی کے ممکنہ طور پر خطرے ميں پڑ جانے کی وجہ سے اس بارے ميں مزيد کچھ نہیں کہنا چاہتے۔

ليبيا کے باغيوں کے قائد عبدالجليل

ليبيا کے باغيوں کے قائد عبدالجليل

ليبيا کے وزير اعظم محمودی نے قذافی کے سیاسی مستقبل سے متعلق کسی بھی قسم کی بات چيت سے انکار کر ديا ہے، جبکہ باغيوں کے رہنما عبدالجليل نے ايک بار پھر ايسی کسی بھی مکالمت کے امکان کو مسترد کر دیا ہے، جس ميں معمر قذافی کے دور اقتدار کے خاتمے کو طے شدہ بات نہ سمجھا جائے۔

باغيوں کا دعویٰ ہے کہ وہ طرابلس سے 40 کلوميٹر دور واقع شہر زاويہ پر مکمل قبضہ کر چکے ہيں۔ تاہم باغیوں کے ایک فيلڈ کمانڈر خليفہ نے زيادہ محتاط انداز ميں کہا ہے کہ مشرقی حصے کے علاوہ زاويہ شہر کا زيادہ تر حصہ اب باغیوں کے قبضے ميں ہے۔

ادھر انگولا کے صدر ڈوس سانتوس نے اپيل کی ہے کہ نيٹو کی قیادت ليبيا ميں فوجی مداخلت فوری طور پر بند کر دے تاکہ جنگ ميں مصروف فريقين کے ليے ایک سياسی حل کی گنجائش پيدا ہو سکے۔

رپورٹ: شہاب احمد صديقی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM