1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

طبی امدادی تنظیم قبائلی علاقے میں آپریشن روک دے، پاکستان

پاکستان نے فرانسیسی طبی امدادی تنظیم ڈاکٹر وِد آؤٹ بارڈر کو کہا ہے کہ وہ ملک کے شمال مغربی قبائلی علاقوں میں اپنی امدادی کاررائیاں روک دے۔ یہ بات انسانی بنیادوں پر امدادی کام کرنے والی اس تنظیم کی طرف سے بتائی گئی ہے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق اس فیصلے کے بارے کی تصدیق فوری طور پر پاکستانی حکومت کی جانب سے نہیں ہو سکی تاہم یہ ایک ایسے موقع پر سامنے آیا ہے جب پاکستانی حکام ملک میں کام کرنے والی غیر ملکی امدادی تنظیموں کے حوالے سے کنٹرول سخت کر رہے ہیں۔

پاکستان میں ایم ایس ایف یا ڈاکٹر ود آؤٹ بارڈرز کے سربراہ آزاد الیساندرو الوکو کے مطابق ان کی تنظیم اس فیصلے سے ’سخت مایوس‘ ہوئی ہے۔ ایم ایس ایف کے ذرائع نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو آج جمعہ 10 نومبر کو بتایا کہ قبائلی علاقے باجوڑ میں اس تنظیم کے تمام 120 ارکان کو 17 تک واپس بلا لیا جائے گا۔ نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر اس ذریعے نے اے ایف پی کو بتایا، ’’ایم ایس ایف کی اب فاٹا میں کوئی موجودگی نہیں ہو گی۔ یہ اس ملک کے ان علاقوں میں سے ایک ہے جہاں صحت کے حوالے سے ایمرجنسی سہولیات اور زچہ وبچہ کی صحت کے بارے میں صورتحال انتہائی مخدوش ہے۔‘‘

باجوڑ اور کُرم ان سات نیم خودمختار قبائلی علاقوں میں شامل ہیں جو افغانستان کی سرحد کے قریب واقع ہیں اور ان علاقوں کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ ایک دہائی سے زائد عرصے تک طالبان اور القاعدہ سے منسلک عسکریت پسندوں کی آماجگاہ رہے۔ یہ قبائلی علاقے ملک کے غریب ترین علاقوں میں شامل ہیں اور جہاں اسلام آباد حکومت کی جانب سے تعمیر وترقی پر ماضی میں کوئی خاص توجہ نہیں دی گئی۔

ایم ایس ایف کی طرف سے جمعرات نو نومبر کو جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا کہ پاکستانی حکام نے انہیں بتایا تھا کہ ان کو باجوڑ میں طبی سہولیات کی فراہمی جاری رکھنے کے لیے دیے گئے نو اوبجیکشن سرٹیفیکٹ کی توسیع نہیں کی جائے گی۔ اس تنظیم کے مطابق پاکستان حکام کی جانب سے اس فیصلے کی کوئی وجہ نہیں بتائی گئی۔

ویڈیو دیکھیے 02:16

نوجوانوں کے ليے ايک موقع، فاٹا يونيورسٹی

Audios and videos on the topic

ملتے جلتے مندرجات