1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

طالبان کے منحرف دھڑے نے امن مذاکرات کی حمایت کردی

افغان طالبان سے علیحدگی اختیار کرنے والے دھڑے نے اتوار کو ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ افغان حکومت کے ساتھ مذاکرات کے لیے آمادہ ہے، تاہم اس کی شرط ملک میں شرعی قوانین کا نفاذ اور تمام غیر ملکی افواج کا انخلاء ہے۔

اتوار کو مشرقی افغانستان میں قریب 200 حامیوں کے ایک گروپ سے خطاب کرتے ہوئے ملا عبدالمنان نیازی کا کہنا تھا کہ اُن کے دھڑے کا افغان حکومت پر سے اعتماد مکمل طور پر اُٹھ چُکا ہے۔ اس اجلاس میں خبر رساں ادارے ایسو سی ایٹیڈ پریس کا ایک فوٹوگرافر بھی موجود تھا۔

نیازی منحرف دھڑے کے سربراہ ملا محمد رسول کا نائب ہے۔ رسول گذشتہ موسم گرما میں افغان طالبان سے علیحدہ ہوا تھا۔ اس وقت طالبان نے ہلاک ہونے والے گروپ کے بانی ملا عُمر کے جانشین کے طور پر ملا اختر منصور کو منتخب کر لیا تھا۔ منصور گزشتہ ہفتے ایک امریکی ڈرون حملے میں مارا گیا تھا۔

Afghanistan Farah Taliban Mullah Mohammad Rasool Akhund

ملا محمد رسول

اتوار کے روز طالبان کے اس دھڑے کے سینیئر رہنما عبدالمنان نیازی نے اپنے بیان میں کہا کہ اُن کا گروپ کابل کے ساتھ مذاکرات پر آمادہ ہے تاہم اس کی کچھ لازمی شرائط ہوں گی۔ ان شرائط میں افغانستان میں شرعی قوانین کے نفاذ اور ملک سے تمام غیر ملکی فوجیوں کا انخلاء شامل ہے۔

اُدھر افغان طالبان کے مرکزی گروپ نے بھی افغان حکومت کے ساتھ مذاکرات پر رضامندی کی یہی شرائط رکھی ہیں تاہم اس گروپ کا مطالبہ یہ ہے کہ یہ شرائط پہلے پوری کی جائیں اُس کے بعد مذاکرات کیے جا سکتے ہیں۔

یاد رہے کہ ملا منصور نے افغان صدر اشرف غنی کے ایماء پر ہونے والے چہار فریقی مذاکرات میں شرکت سے انکار کر دیا تھا۔ ان مذاکرات میں افغانستان کے علاوہ پاکستان، امریکا اور چین شامل تھے۔ اس چار فریقی گروپ کے نمائندے بات چیت کی غرض سے پانچ ملاقاتیں کر چُکے ہیں تاہم ان میں افغان طالبان کو مدعو نہیں کیا گیا تھا۔ ان ممالک کی کوشش ہے کہ افغانستان کی 15 سالہ جنگ کے خاتمے کے لیے افغان حکومت اور طالبان باغیوں کے مابین بات چیت کے لیے ایک ’روڈ میپ‘ تیار کیا جائے۔

Taliban in Afghanistan

ذبیح اللہ مجاہد ہلمند کے پہاڑی علاقے میں صحافیوں کو انٹرویو دیتے ہوئے

طالبان کے مرکزی گروپ کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد پہلے ہی علیحدہ ہونے والے دھڑے کو ملا محمد رسول کا گروپ قرار دے چُکے ہیں۔ اتوار کو خبر رساں ایجنسی اے پی کو بیان دیتے ہوئے اُن کا کہنا تھا،’’ملا رسول کو کابل اور واشنگٹن کی پشت پناہی حاصل رہی ہے۔‘‘

ذبیح اللہ مجاہد نے ملا رسول کے دھڑے کو ’طالبان کی شکل میں پائی جانے والی حکومتی فوج‘ قرار دیا ہے۔ اُن کا مزید کہنا تھا،’’ہمارے لیے ملا رسول ایک مقامی پولیس اہل کار اور افغان خفیہ سروسز کی ایک کٹھ پتلی سے زیادہ نہیں ہے۔‘‘

ملتے جلتے مندرجات