1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

طالبان کی عدالت کا فیصلہ، افغان جوڑا سنگسار کر دیا گیا

افغانستان میں طالبان کی ایک عدالت کی طرف سے سنائے گئے فیصلے کے بعد ملک کے شمال میں مسلح عسکریت پسندوں نے غیر ازدواجی جنسی تعلقات کے الزام میں ایک مرد اور عورت کو پتھر مار مار کر ہلاک کر دیا۔

Afghanistan Protest und Demonstration Gedenken an Farkhunda

ایک احتجاجی مظاہرہ، افغانستان میں اس طرح کے واقعات کے خلاف عوامی مظاہرے بھی کیے جاتے ہیں

افغان دارالحکومت کابل سے اتوار تیرہ ستمبر کو ملنے والی جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق ان دونوں افغان شہریوں کے طالبان شدت پسندوں کی طرف سے سنگسار کیے جانے کی ایک سرکاری اہلکار نے بھی تصدیق کر دی۔

شمالی افغان صوبے سرِ پُل کے گورنر کے دفتر کے تعلقات عامہ کے شعبے کے سربراہ حامد علمی نے ڈی پی اے کو بتایا کہ یہ واقعہ اس صوبے کے سوزمہ قلعہ ضلع میں قلعہء سرخ کے مقام پر پیش آیا۔ حامد علمی کے مطابق اس جوڑے کو طالبان کی ایک مقامی عدالت نے ایک مقدمے کی سماعت کے بعد غیر ازدواجی جنسی تعلقات کے الزام میں مجرم قرار دے دیا تھا۔

سرِ پُل کے صوبائی گورنر کے دفتر کے اس اعلیٰ اہلکار نے کہا کہ اس خوفناک جرم کے ارتکاب کے باوجود صوبائی حکومت ایسے واقعات کو روکنے اور ’حالات میں بہتری کے لیے کچھ نہ کر سکی‘۔ حامد علمی کے بقول سرِ پُل کا افغان صوبہ طالبان عسکریت پسندوں کے کنٹرول میں ہے اور وہاں سوزمہ قلعہ نامی ضلع میں تو حالات خاص طور پر پریشان کن ہیں۔

ڈی پی اے نے لکھا ہے کہ اس افغان جوڑے کے زنا کے الزام میں سنگسار کیے جانے کے واقعے پر افغان طالبان کے مقامی نمائندے کی طرف سے فوری طور پر کوئی تبصرہ نہیں کیا گیا۔ افغانستان میں طالبان شدت پسند اپنے متعارف کردہ نظام عدل کے تحت مختلف طرح کے جرائم میں نہ صرف ملزمان کو انتہائی نوعیت کی سزائیں سناتے ہیں بلکہ ان سزاؤں پر عملدرآمد بھی سرعام کیا جاتا ہے۔

Afghanistan Protest und Demonstration Gedenken an Farkhunda

ماضی میں رونما ہونے والے ایسے پرتشدد واقعات کے خلاف ایک مظاہرہ

طالبان کی طرف سے ان کی اپنی عدالتوں کے فیصلوں کے نام پر ایسے اقدمات تقریباﹰ سارے کے سارے ہی ان صوبوں اور اضلاع میں کیے جاتے ہیں، جو کابل حکومت کے دستوں کو پسپا کر دینے کے بعد اس وقت مکمل یا جزوی طور پر ان عسکریت پسندوں کے کنٹرول میں ہیں۔

افغانستان کے وسطی صوبے غور میں بھی قریب دو ہفتے قبل ایک نوجوان لڑکے اور لڑکی کو غیر قانونی جنسی روابط کے الزام میں سرعام سزا دی گئی تھی۔ ان دونوں کے خلاف طالبان ہی کی ایک مقامی عدالت کے فیصلے کے مطابق ’غیر قانونی رابطوں‘ کا الزام ثابت ہو گیا تھا اور ان دونوں کو عام لوگوں کے سامنے سو سو کوڑے مارے گئے تھے۔