1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

طالبان کو چھوٹ دینے کے لئے تیار ہیں، افغان امن کونسل

افغانستان میں قائم کی گئی نئی امن کونسل نے کہا ہے کہ وہ انتہا پسندوں کو مذاکرات کی میز پر لانے کے لئے انہیں چھوٹ دینے کے لئے تیار ہے جبکہ اس کونسل نے سعودی عرب پر زور دیا ہے کہ وہ ان مذاکرات میں ثالثی کرے۔

default

جمعرات کو اس امن کونسل کے ترجمان قیوم الدین کاشف نے کابل میں منعقدہ ایک نیوز کانفرنس میں کہا کہ طالبان کے ساتھ مذاکرات کے سلسلے میں سعودی عرب کی ثالثی انتہائی اہم ثابت ہو گی،’اعلیٰ امن کونسل اسلامی دنیا بالخصوص اسلامی کانفرنس اور سعودی بادشاہ سے توقع رکھتی ہے کہ وہ افغانستان میں قیام امن کے لئے مدد کریں۔‘

Afghanistan Präsident Hamid Karsai in Kundus

افغانستان کے صدر حامد کرزئی

ستّر اراکین پر مشتمل اس امن کونسل کے ترجمان نے مسلم دنیا پر بھی زور دیا کہ وہ افغانستان میں گزشتہ نو سالوں سےجاری جنگ کے خاتمے کےلئے اپنا کردار ادا کرے۔’ مسلم افغان قوم اپنے ملک میں قیام امن چاہتی ہے اوراس کے لئے وہ مسلم برداری سے اپیل کرتی ہے: اپنے بھائیوں کی مدد کرو، یہ مسلم دنیا کی ذمہ داری ہے کہ وہ افغان قوم کی اس درخواست پر مثبت ردعمل ظاہر کرے۔‘

افغان صدر حامد کرزئی کی طرف سے بنائی گئی اس امن کونسل کا بنیادی کام طالبان کے ساتھ مذاکرات کرنا اور انہیں معاشرے کے مرکزی دھارے میں لانا ہے۔ اس کونسل کے ترجمان نے اس حوالے سے کہا کہ ان کی کوشش ہوگی کہ وہ شدت پسندوں کو ایک ایسا باعزت راستہ فراہم کریں، جس کے تحت وہ انتہا پسندی کا راستہ چھوڑتے ہوئے مرکزی سیاست کا حصہ بن سکیں۔ انہوں نے کہا کہ اس باعزت واپسی کے تحت طالبان کو سرکاری عہدے، گھر اور تنخواہیں دینے کے علاوہ ان کی عزت نفس کا خصوصی خیال رکھا جائے گا۔

کاشف نے کہا کہ طالبان ، مرکزی سیاست کا حصہ بننے کے لئے کچھ مراعات کا تقاضا کرتے ہیں، اور افغان حکومت قیام امن کے لئے انہیں یہ مراعات یا چھوٹ مہیا کرنے کے لئے تیار ہے۔ تاہم انہوں نے اس بارے میں کوئی مزید معلومات فراہم نہیں کیں۔ نیوز کانفرنس کے دوران انہوں نے امن کونسل کا اعلامیہ پڑھتے ہوئے کہا کہ امن کونسل افغانستان کے مسلح گروہوں اور ان کے رہنماؤں سے اپیل کرتی ہے کہ وہ ہتھیار چھوڑ کر امن عمل کا حصہ بنیں۔

Afghanistan Taliban

طالبان غیرملکی افواج کے انخلاء سے پہلے مذاکرات کے لئے تیار نہیں

دریں اثناء نیٹو اور افغان حکام نے جمعرات کو تصدیق کی کہ افغان صدر حامد کرزئی کی اعلیٰ انتظامیہ نے کچھ اہم طالبان رہنماؤں کے ساتھ ابتدائی رابطے شروع کر دئے ہیں۔ دوسری طرف افغان طالبان کا مؤقف ہے کہ جب تک افغانستان سے غیر ملکی افواج کا مکمل انخلاء نہیں ہوتا وہ افغان حکومت کےساتھ کسی بھی قسم کے مذاکرات کا حصہ نہیں بنیں گے۔ کئی طالبان رہنماؤں نے کہا کہ افغان حکومت اور کچھ طالبان باغیوں کے مابین امن مذاکرات کی جھوٹی خبروں سے، طالبان کی صفوں میں پھوٹ ڈالنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: ندیم گِل

DW.COM

ویب لنکس