1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

طالبان کا بنیر سے انخلاء، مقامی طالبان کا گشت جاری

پاکستان کے شمال مغربی سرحدی علاقے بنیر میں سوات سے آئے طالبان کا انخلاء ہو گیا ہے تاہم اطلاعات کے مطابق بینر کے مقامی طالبان ہنوز علاقے کا گشت کررہے ہیں۔

default

مقامی پولیس افسر عبدالرشید خان نے خبر رساں ادارے رائٹرز کو بتایا ہے کہ اب بھی کم از کم دو سو کے قریب طالبان عسکریت پسند علاقے میں مسلّح گشت کر رہے ہیں۔

Afghanistan Taliban

طالبان عسکریت پسندوں کا کئی علاقوں پر عملاً کنٹرول ہے


پاکستانی دارلحکومت اسلام آباد سے سو کاومیٹر کے فاصلے پر واقعے بنیر پر طالبان کے کنٹرول پر مغربی اور نیٹو ممالک میں سخت تشویش پائی جا رہی تھی۔ پاکستان کے اندر اور بین الاقوامی برادری میں حکومت اور طالبان کے درمیان حال ہی میں کیے گئے نفاذ ِ شریعت سے متعلق معاہدے کے ناقدین نے اس معاہدے کو مالاکنڈ ڈویژن میں طالبان کی حکومت سے تعبیر کیا تھا۔

Pakistanischer Armeechef Ashfaq Kayani

پاکستانی حکومت اور فوج عسکریت پسندوں کو ملک کے اندر متوازی نظام قائم کرنے کی اجازت نہیں دے گی، جنرل اشفاق پرویز کیانی


گزشتہ روز پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل اشفاق پرویز کیانی نے اس عزم کا اعادہ کیا تھا کہ پاکستانی حکومت اور فوج عسکریت پسندوں کو ملک کے اندر متوازی نظام قائم کرنے کی اجازت نہیں دے گی۔ جمعے ہی کے روز طالبان رہنما مولانا فضل اللہ نے بنیر میں موجود عسکریت پسندوں کو بنیر چھوڑ کر سوات واپس پہنچ جانے کا حکم دیا تھا۔

تاہم مقامی زرائع کا کہنا ہے کہ طالبان اب بھی علاقے میں موجود ہیں۔ طالبان رہنماؤں کا اس بارے میں کہنا ہے کہ بنیر میں رہنے والے طالبان کو ان کا اپنا علاقہ چھوڑنے کے لیے کس طرح کہا جاسکتا ہے؟

Hillary Clinton

پاکستان عالمی امن کے لیے خطرہ بن چکا ہے، امریکی وزیرِ خارجہ ہلری کلنٹن کا بیان

سوات امن معاہدے کے بعد بنیر پر طالبان کے قبضے کو نظامِ عدل معاہدے کی خلاف ورزی سے بھی تعبیر کیا گیا تھا۔ معاہدے کے تحت طالبان کو ہتھیار پھینک کر حکومتِ پاکستان کی عمل داری کو قبول کرنا تھا تاہم سوات اور صوبہِ سرحد کے متعدد علاقوں میں عملاً مسلّح طالبان کی حکومت ہے۔

امریکی وزیرِ خارجہ ہلری کلنٹن نے سوات امن معاہدے پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے پاکستان کو عالمی امن کے لیے خطرہ قرار دیا ہے اور اس بات پر حیرت کا اظہار کیا ہے کہ پاکستانی حکومت ان علاقوں میں عسکریت پسندوں کے خلاق کارروائی کیوں نہیں کر رہی ہے۔

پاکستان کی متعدد سیاسی جماعتیں بھی طالبان کی پیش رفت پر تشویش کا اظہار کررہی ہیں اور اس ضمن میں ایک کل جماعتی اجلاس بلانے کی بھی مطالبہ کیا گیا ہے۔