1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

طالبان پر شب خون اہم ترين ہتھيار: ہليری کلنٹن

امريکہ رفتہ رفتہ افغانستان سے اپنی فوج نکال لينا چاہتا ہے۔ ليکن افغان صدر حامد کرزئی اسے بہت سست رفتار سمجھتے ہيں۔اب امريکی صدر نے لزبن ميں نيٹو کی سربراہ کانفرنس سے قبل واشنگٹن کی حکمت عملی کو واضح شکل ميں پيش کيا ہے۔

default

افغان صدر حامد کرزئی

افغانستان ميں امريکی افواج کے کمانڈر جنرل ڈيوڈ پيٹريس افغان صدر حامد کرزئی پر اتنے برہم کبھی بھی نہيں تھے۔ وجہ يہ ہے صدر کرزئی نے امريکی روزنامے واشنگٹن پوسٹ کو حال ہی ميں ايک انٹرويو ديا ہے، جس ميں انہوں نے نہ صرف زيادہ سے زيادہ امريکی فوجيوں کے افغانستان سے جلد انخلاء کا مطالبہ کيا ہے بلکہ اُنہوں نے جنرل پيٹريس کی حکمت عملی کے اہم ترين پہلو، يعنی طالبان کے کمانڈروں کے ٹھکانوں پر امريکی خصوصی کمانڈوز کے رات کے وقت کئے جانے والے حملوں پر بھی شديد تنقيد کی ہے۔

David Petraeus NATO US Force Afghanistan

افغانستان ميں نيٹو اور امريکی افواج کے کمانڈر جنرل پيٹريس

کرزئی نے واشنگٹن پوسٹ کے ذريعے امريکی حکومت اور جنرل پيٹريس سے اپيل کرتے ہوئے کہا ہے کہ افغان طالبان کے ٹھکانوں پر شب خون ايک مستقل مسئلہ ہے اور يہ حملے اب بالآخر ختم کر ديے جانے چاہئيں۔

امريکی نشرياتی ادارے سی اين اين نے خبر دی ہے کہ جنرل پيٹريس صدر کرزئی کے مطالبے پر حيرت زدہ اور مايوس ہيں۔ اُن کا کہنا ہے کہ کرزئی اس طرح افغانستان ميں نيٹو کی پوری کارروائی کو کمزور بنا رہے ہيں کيونکہ شب کے دوران کئے جانے والے حملوں ميں دھماکہ خيز مادوں کے ذخائر اور طالبان کے کمانڈروں کو نشانہ بنايا جاتا ہے اور يہ نہايت کارگر ثابت ہو رہے ہيں۔

Hillary Clinton Moskau

امريکی وزير خارجہ ہليری کلنٹن

 جنرل پيٹريس نے يہ بھی کہا کہ ان حملوں کے نتيجے ميں طالبان کے ہلاک اور گرفتار کئے جانے والے سرغنوں کی تعداد چھ گنا بڑھ گئی ہے۔ امريکی وزير خارجہ ہليری کلنٹن نے بھی کہا ہے کہ شب کے دوران امريکی کمانڈوز کی خصوصی کارروائيوں کی وجہ سے طالبان کی قيادت کو زبردست نقصان پہنچا ہے۔ اُنہوں نے يہ بھی کہا کہ امريکی خصوصی دستوں کی تمام کارروائياں افغان حکومت کے صلاح مشوروں سے کی جاتی ہيں اور اُن ميں زيادہ تر افغان فوجی شامل ہوتے ہيں۔ امريکی وزير خارجہ نے کہا کہ امريکہ کو، بے گناہ شہريوں کی ہلاکت پر صدر کرزئی کی تشويش کا احساس ہے ليکن ان خصوصی کارروائيوں سے گريز ممکن نہيں ہے۔ اُنہوں نے کہا:

" بالکل واضح خفيہ اطلاعات کی بنياد پر کئے جانے والے يہ آپريشن  طالبان کی قيادت کے خلاف ہمارے اہم ترين ہتھيار ہيں۔"

US-Präsident Barack Obama NO FLASH

امريکی صدر اوباما

امريکی صدر اوباما کا کہنا ہے کہ افغان فوج اور مرکزی اور صوبائی حکومتوں کو اتنا طاقتور بنايا جانا چاہيے کہ وہ افغانستان کے مستقبل کی ذمے داری سنبھال سکيں۔ انہوں نے کہا:

" امريکی وزارت دفاع کے ماہرين کے خيال ميں يہ کام سن 2014ء تک پایہء تکميل کو پہنچنا مشکل ہے۔ اُن کا اندازہ ہے کہ چار سال بعد بھی افغانستان ميں امريکی فوجيوں کی لازمی ضرورت ہو گی اور وہ تربيت کاروں کی حيثيت سے نيٹو کی دوسری اتحادی افواج کے انخلاء کے بعد بھی افغانستان ميں موجود رہيں گے۔"

رپورٹ: شہاب احمد صدیقی

ادارت: امجد علی

DW.COM

ویب لنکس