1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

 طالبان سے مذاکرات کا امریکی مطالبہ اور پاکستان کی مشکلات

امریکا کے مطابق پاکستان طالبان کو مذاکرات کی میز پر لانے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے لیکن تجزیہ نگاروں کے خیال میں مشرق وسطیٰ کی صورتِ حال اور اسلام آباد کی کابل سے بڑھتی ہوئی کشیدگی کے پیشِ نظر یہ کام آسان نہیں ہوگا۔

افغانستان کے حوالے سے ٹرمپ انتظامیہ ان دنوں پالیسی بنانے میں مصروف ہے اور اس سلسلے میں کچھ اراکینِ کانگریس نے پاکستان کے خلاف سخت رویہ اپنانے پر زور دیا ہے جب کہ امریکی انتظامیہ کے کئی عہدیدار محتاط انداز اختیار کرنے کا مشورہ دے رہے ہیں۔

ایکسپریس ٹریبیون کے سابق ایگزیٹو ایڈیٹر اور معروف تجزیہ نگار ضیاء الدین کے خیال میں پاکستان طالبان کو مذاکرات کی میز پر لا سکتا ہے لیکن وہ ایسا کرنے میں ہچکچاہٹ کا شکار ہے۔

ڈوئچے ویلے سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا، ’’امریکی انتظامیہ افغانستان کے حوالے سے خود دو رُخی پالیسی کا شکار ہے۔ اوباما امریکا سے فوج نکالنا چاہتا تھا اور اس نے تاریخ بھی دے دی تھی لیکن ٹرمپ ایک مختلف سمت میں چل رہے ہیں۔ پاکستان کو خدشہ یہ ہے کہ اگر امریکا افغانستان سے نکل گیا تو ایران و بھارت، جو افغانستان میں بہت متحرک ہیں، اسلام آباد کو دونوں اطراف سے گھیر لیں گے۔ ایسی صورت میں اگر اُس ملک میں پاکستان کا حمایت یافتہ کوئی گروہ نہیں ہوتا تو اسلام آباد کے لئے بہت مشکل ہوجائے گی۔

اسی لئے پاکستان افغان طالبان کی حمایت سے دست برداری اختیار نہیں کر سکتا۔پاکستان افغان طالبان کو میز پر لاسکتا ہے لیکن اس صورتِ حال کے پیشِ نظر وہ ایسا نہیں کرے گا۔‘‘

Pakistan Mitglied Nationalversammlung Bushra Gohar (privat)

عوامی نیشنل پارٹی کی رہنما بشری گوہر

ایک سوال کے جواب میں ضیاء الدین  نے کہا، ’’پاکستان اور افغان طالبان کو اندازہ نہیں ہے کہ مشرقِ وسطیٰ میں کتنی تبدیلیاں آ چکی ہیں۔سعودی عرب اور قطر کی کشیدگی کی وجہ سے بھی معاملات بڑے پیچیدہ ہوگئے ہیں۔ افغان طالبان یہ نہیں کہہ سکتے کہ وہ اس کشیدگی میں غیر جانبدار رہ سکتے ہیں۔ اگر صورتِ حال تصادم کی طرف بڑھتی ہے تو طالبان کو کسی ایک فریق کی حمایت کرنی پڑے گی اور وہ یقیناًسعودی عرب کی طرف جائیں گے۔ ایسی صورت میں انہیں اپنا دوحہ آفس چلانے میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ تصادم کی صورت میں افغان مسئلہ بالکل پس منظر میں چلا جائے گا اور مشرقِ وسطیٰ کے ممالک پاکستان اور افغان طالبان کو بالکل تنہا چھوڑ دیں گے کیونکہ اُن کے لئے پھر اپنے ممالک کے مسائل زیادہ اہم ہوجائیں گے۔‘‘

تاہم دوسری جانب افغان طالبان کا دعویٰ ہے کہ وہ ایسی صورت میں غیر جانبدار رہیں گے۔ ڈی ڈبلیو سے بات چیت کرتے ہوئے طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا، ’’نہ ہمیں سعودی عرب نے کہا کہ ہم قطر سے اپنے تعلقات منقطع کریں اور نہ ہی متحدہ عرب امارات نے ایسا کوئی مطالبہ کیا ہے۔ ہمارے تینوں ممالک سے تعلقات اچھے ہیں اور دوحہ میں آج بھی ہمارا آفس کام کر رہا ہے، جہاں ہماری سیاسی شوریٰ کے لوگ موجود ہیں۔ ‘‘

مذکرات کے حوالے سے ذبیح اللہ کا کہنا تھا۔’’افغانستان میں امن اور مذاکرات کے حوالے سے ہمارا موقف بڑا واضح ہے کہ اس ملک میں ایسا اُس وقت تک نہیں ہوسکتا جب تک امریکا اپنی فوجوں کا انخلاء نہ کرے۔ چین ، روس اور پاکستان مذاکرات کے حوالے سے کوششیں کر رہے ہیں۔ ہم نے اُن پر بھی یہ بات واضح کر دی ہے کہ انخلاء اور مذاکرات مشروط ہیں اور امریکی انخلاء کے بغیر افغانستان میں امن و استحکام ممکن نہیں۔‘‘

Taliban eröffnen Büro in Doha Qatar (Reuters)

قطر میں قائم طالبان کے دفتر کی عمارت

طالبان عسکریت پسندی اور افغان اُمور پر گہری نظررکھنے والی عوامی نیشنل پارٹی کی رہنما بشری گوہر کے خیال میں پاکستان کو اپنی پالیسی پر سنجیدگی سے نظر ثانی کرنی ہو گی۔ ڈوئچے ویلے سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا، ’’پاکستان کو اچھے اور برے طالبان والی ناکام پالیسی کو ترک کرنا چاہیے اور ان عناصر کے خلاف ٹھوس اطلاعات کی بنیاد پر ایکشن لینا چاہیے۔ ہمیں افغانستان کے عوام اور حکومت سے اچھے تعلقات قائم کرنے چاہئیں اور افغان طالبان سے تعلق ختم کرنا چاہیے، جو ہمارے لئے تباہ کن ہیں کیونکہ یہ عسکریت پسند معصوم انسانوں کے قتلِ عام میں ملوث ہیں اور ان کو اپنے حملوں کا نشانہ بناتے ہیں۔‘‘

بشری گوہر کا کہنا تھاکہ پاکستان اور افغانستا ن کو مشترکہ دشمن کا سامنا ہے۔’’طالبان پراکسی کو خارجہ پالیسی کے محور کے طور پر استعمال کرنا کوئی دانشمندی نہیں ہے۔ حکومت اور عوامی سطح پر ہمیں دوسرے ممالک سے تعلقات استوار کرنے چاہئیں۔ ہمیں افغان طالبان کی محفوظ پناہ گاہیں ختم کرنی ہوں گی اور اس بات کو یقینی بنانا ہو گا کہ ہماری سرزمین کسی دوسرے ملک کے خلاف استعمال نہ ہو۔‘‘

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا، ’’اگر ہم نے اپنی پالیسی تبدیل نہیں کی تو مشرقِ وسطیٰ میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کی وجہ سے ہمارے لئے سیکیورٹی چیلنجوں میں مزید اضافہ ہوجائے گا۔‘‘

DW.COM