طالبان سے رہائی پانے والے جوشوا بوائل کینیڈا میں گرفتار | حالات حاضرہ | DW | 03.01.2018
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

طالبان سے رہائی پانے والے جوشوا بوائل کینیڈا میں گرفتار

گزشتہ برس اکتوبر میں طالبان کے ایک دھڑے سے رہائی پا کر کینیڈا پہنچنے والے کینیڈین شہری جوشوا بوائل کو ملکی پولیس نے گرفتار کر لیا ہے۔ بوائل پر پندرہ الزامات عائد کیے گئے ہیں۔

جوشوا بوائل اور اُن کی امریکی بیوی کیٹلان کولمین کو پانچ برس قبل مبینہ طور پر طالبان کے اتحادی گروہ حقانی نیٹ ورک نے سن دو ہزار بارہ میں افغانستان میں اغوا کیا تھا۔ اُن کے تین بچے طالبان کی قید کے دوران ہی پیدا ہوئے۔

جوشوا بوائل پر غیر قانونی طور پر حراست میں رکھنے، جنسی طور پر زدو کوب کرنے اور موت کی دھمکی دینے جیسے الزامات عائد کیے گئے ہیں۔ بوائل کے وکیل ایرک گرینجر کا کہنا ہے کہ اُن کے موکل بظاہر معصوم ہیں اور پہلے کبھی کسی قانونی مشکل میں نہیں پڑے۔

گرینجر کے مطابق جوشوا بوائل آج بروز بدھ اوٹاوا کی ایک عدالت کے سامنے پیش ہوں گے۔ کینیڈین ٹی وی چینل سی ٹی وی کے مطابق بوائل پر مار پیٹ کے آٹھ، غیر قانونی طور پر حبس بے جا میں رکھنے کے دو اور جنسی تشدد کے دو الزامات کا سامنا ہے۔ علاوہ ازیں اُن پر پولیس کو گمراہ کرنے اور ایک ضرر رساں مادے ٹریزوڈون کا بندوبست کرنے کا الزام بھی عائد کیا گیا ہے۔

ایک کینیڈین اخبار کو دیے اپنے ایک بیان میں جوشوا بوائل کی بیوی کولمین نے اُن پر لگے الزامات پر تو کوئی تبصرہ نہیں کیا تاہم یہ ضرور کہا کہ برسوں صدمے اور دباؤ میں رہنے کے باعث اُن کے شوہر ذہنی انتشار کا شکار ہوئے ہیں۔

نیوز ایجنسیوں کی رپورٹوں کے مطابق طالبان کے گروہ حقانی نیٹ ورک جسے امریکا نے ایک دہشت گرد تنظیم قرار دیا ہوا ہے، نے اس جوڑے کو کابل کے ایک قریبی علاقے سے اغوا کیا تھا۔

 امریکا اور افغانستان کے خفیہ اداروں کا کہنا ہے کہ  پاکستان نے حقانی نیٹ ورک کے جنگجوؤں کو پاکستان کے قبائلی علاقوں میں پناہ دے رکھی ہے تاہم اسلام آباد حکومت اس الزام کو مسترد کرتی ہے۔

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات