1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

صنعاء کنگال ہو گیا، بچے بھیک مانگنے پر مجبور

یمنی دارالحکومت صنعاء حوثی شیعہ ملیشیا باغیوں کے قبضے میں ہے۔ اس شہر کو سعودی عسکری اتحاد تواتر سے نشانہ بناتا رہتا ہے۔ سارے شہر کا کاروبار ٹھپ ہو چکا ہے۔ اب اس شہر کے بچے بھیک مانگنے پر مجبور ہیں۔

صنعاء میں زندگی گزارنا اس قدر مشکل ہو گیا کہ بچے اپنی اور گھر والوں کی خوراک کے لیے گلی گلی بھیک مانگتے پھرتے ہیں۔ حوثی شیعہ ملیشیا اور منصور ہادی کے درمیان اقتدار کی کشمکش نے سارے یمن میں بھوک اور غربت کو پہلے سے بھی زیادہ عام کر دیا ہے۔ یمن کو خانہ جنگی سے قبل بھی عرب دنیا کا غریب ترین ملک تصور کیا جاتا تھا۔

صنعاء کے گلیوں میں بھیک مانگنے والا ایک بچہ مصطفیٰ ہے، جس کا والد دو برس قبل شمالی قصبے حارض میں ہلاک ہو گیا تھا۔ اُس کی والدہ مصطفیٰ اور اُس کے تین بھائیوں کو لے کر حارض سے صنعاء منتقل ہو گئی لیکن خاندانی حالات میں کوئی تبدیلی نہیں آئی۔ یمن میں جاری جنگی حالات میں کئی بچوں کے والدین ہلاک ہو چکے ہیں اور بے شمار ایسے ہیں جن کی والدہ یا والد میں سے ایک مارا جا چکا ہے۔

مصطفیٰ نے صنعاء پہنچنے کے بعد چھوٹی موٹی نوکری تلاش کرنے کی بہت کوشش کی لیکن وہ ناکام رہا کیونکہ لوگوں کا کاروبار تقریباً ختم ہو کر رہ گیا ہے۔ خریدار موجود نہیں اور دوکانیں سامان سے خالی پڑی ہیں کیونکہ سپلائی کا کوئی محفوظ راستہ نہیں بچا ہے۔ تاجر حضرات اپنی بچی کھچی اشیاء کو فروخت کرنے کی کوشش میں ہیں۔ بہت سارے لوگ انسانی ہمدردی کے تحت ملنے والی بین الاقوامی امداد سے پیٹ بھرنے کی کوشش میں ہیں۔

YEMEN-CONFLICT-SANAA-STRIKES (AFP/Getty Images)

صنعاء کی پررونق گلیاں اور بازار مسلسل خانہ جنگی سے تباہ و برباد ہو چکے ہیں

ان بھیک مانگنے والے بچوں اور اُن کی کفالت کرنے والے کہتے ہیں کہ اُن کے پاس روزانہ کے کھانے کے لیے کئی مرتبہ کچھ نہیں ہوتا اور بازار سے روٹی خریدنے کے لیے مزدوری دستیاب نہیں تو یہی بچے بھیک مانگ کر اپنے خاندان کے لیے خوراک حاصل کرنے کی کوشش میں مارے مارے پھرتے رہتے ہیں۔ کئی بچے سڑکوں اور بازاروں میں موٹر گاڑیوں کے شیشے دھو کر کچھ کمانے کی کوشش کرتے ہیں۔

صنعاء میں گزشتہ برس ستمبر سے سرکاری ملازمین کو تنخواہیں جاری نہیں کی گئی ہیں کیونکہ بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ صدر منصور ہادی نے مرکزی بینک کو عدن منتقل کر دیا ہے۔ صنعاء پر قابض حوثی ملیشیا نے دارالحکومت کا انتظام تو سنبھال لیا ہے لیکن سرکاری ملاز مین کو تنخواہیں دینے کے وہ قابل نہیں ہیں۔ تنخواہوں کی عدم ادائیگی کے بعد بھیک مانگنے والے بچوں کی تعداد میں غیرمعمولی اضافہ دیکھا گیا ہے۔