صرف تیس ہزار مہاجرین کو پناہ دیں گے: فرانسیسی وزیر اعظم | حالات حاضرہ | DW | 25.09.2015
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

صرف تیس ہزار مہاجرین کو پناہ دیں گے: فرانسیسی وزیر اعظم

فرانس کی جانب سے اعلان کیا گیا ہے کہ وہ اگلے دو برسوں میں صرف تیس ہزار مہاجرین کو اپنے ہاں پناہ دے گا۔ فرانسیسی وزیر اعظم کے مطابق یہ فیصلہ یورپی یونین کے وسیع تر منصوبے کے تناظر میں کیا گیا ہے۔

مانویل والس نے کل جمعرات کی رات فرانس ٹُو ٹیلی وژن کو انٹرویو دیتے ہوئے یورپ داخل ہونے والے مہاجرین کو پناہ دینے کے معاملے پر پیرس حکومت کی پالیسی کی وضاحت کی۔ والس نے واضح کیا کہ فرانس شام میں پیدا شدہ حالات اور آمریت کی بنیاد پر ملک چھوڑنے والے شامی مہاجرین کی کُل تعداد کو پناہ نہیں دے سکتا۔ والس نے اِسی انٹرویو میں کہا کہ اُن کا ملک صرف تیس ہزار شامی مہاجرین کو اگلے دو برسوں میں پناہ دے گا اور اِس سے زیادہ کی گنجائش نہیں ہے۔

یورپی یونین نے پلان کیا ہے کہ ایک لاکھ ساٹھ ہزار مہاجرین کو اٹھائیس رکن ریاستوں میں کوٹے کی بنیاد پر پناہ دی جائے گی۔ مانویل والس نے اٹھائیس رکنی تنظیم کے پلان کا احساس کرتے ہوئے انٹرویو کے دوران بتایا کہ فرانس تیس ہزار مہاجرین کو یورپی یونین کے وسیع پلان کے تحت پناہ دے رہا ہے۔ والس نے پناہ گزینی کے پیچیدہ مسئلے پر وضاحت کی کہ امیگریشن کے ذریعے فرانس میں آباد ہونے کی سہولت یقینی طور پر موجود ہے لیکن اِس طریقہٴ کار کو قانون، ضابطے اور پیرس حکومت کے مالی مسائل کے تناظر میں منظم کرنا ضروری ہے۔

Frankreich Paris Manuel Valls 23.12.2014

فرانسیسی وزیر اعظم مانویل والس

فرانس ٹُو ٹیلی وژن چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے وزیر اعظم مانویل والس کہا کہ فرانس پہلے ہی سالانہ بنیادوں پر تقریباً دو لاکھ افراد کو امیگریشن کے تحت خوش آمدید کہہ رہا ہے۔ ان دو لاکھ افراد میں مختلف خاندانوں کے میل ملاپ، تعلیم حاصل کرنے والے غیر ملکی طلبا اور اقتصادی مہاجرت کے تحت آنے والے غیر ملکی شامل ہیں۔ اپنے انٹرویو میں والس نے کہا کہ جن غیر ملکی اور غیر قانونی تارکینِ وطن کی پناہ کی درخواستیں مسترد کر دی جائیں گی، اُن کو سرحد پار پہنچا دیا جائے۔

رواں ہفتے کے دوران پیر کے روز اقتصادی تعاون اور ترقی کی تنظیم نے یورپی ملکوں کو خبردار کیا تھا کہ جس طرح حالیہ ہفتوں میں مہاجرین یورپ میں داخل ہوئے ہیں، اُس کا ادراک کرتے ہوئے سیاسی پناہ حاصل کرنے والوں کی دس لاکھ درخواستیں موصول ہو سکتی ہیں۔ عراق اور شام میں پیدا جنگی حالات کے باعث لوگ نقل مکانی پر مجبور ہونے کے بعد اب اپنے اپنے ملکوں سے نکل کر جان بچانے کی فکر میں ہیں۔ اس تنظیم کے مطابق کم از کم پانچ لاکھ افراد کی درخواستیں منظور ہونے کا امکان ہے۔