1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

صدر کرزئی کا طالبان کے ساتھ قیام امن کے لیے نئی حکمت عملی پر غور

افغان صدر حامد کرزئی طالبان کے ساتھ قیام امن کی اپنی حکمت عملی پر نئے سرے سے غور کر رہے ہیں۔ فرانسیسی خبر ایجنسی اے ایف پی کے مطابق اس بارے میں صدر کرزئی نئے اقدامات کا اعلان بہت جلد کر دیں گے۔

default

افغان صدر حامد کر زئی

حامد کرزئی کے ایک ترجمان نے آج اتوار کے روز کہا کہ سابق صدر اور قیام امن سے متعلق اعلیٰ کونسل کے چیئر مین برہان الدین ربانی کا حالیہ قتل امن کوششوں کے لیے بہت بڑا دھچکہ ہے۔ ترجمان کے مطابق صدر کرزئی اس بات پر بھی دلبرداشتہ ہیں کہ امن بات چیت سے متعلق اب تک طالبان کے ملا عمر جیسے اعلیٰ ترین رہنماؤں سے کوئی رابطہ نہیں ہو سکا ہے۔

کرزئی کے اس ترجمان نے اے ایف پی کو بتایا کہ طالبان کے ساتھ ہر قسم کی امن بات چیت معطل کر دی گئی ہے۔ ’’اب صدر کرزئی اپنی امن اور مصالحت کی پالیسی پر نئے سرے سے غور کریں گے۔‘‘ ترجمان نے کہا کہ افغان صدر ملک میں قیام امن سے متعلق نئی کوششوں کی تفصیلات کا اعلان ممکنہ طور پر جلد ہی کریں گے۔ یہ اعلان افغان عوام سے صدر کرزئی کے ٹیلی وژن پر ایک خطاب میں کیا جائے گا۔

NO FLASH Hamid Karzai

اسی دوران کابل سے ملنے والی رپورٹوں میں بتایا گیا ہے کہ افغان دارالحکومت کابل میں آج اتوار کو سینکڑوں افغان شہریوں نے پاکستان کے خلاف کیے جانے والے ایک احتجاجی مظاہرے میں حصہ لیا۔ مظاہرین نے پاکستان کو افغانستان کا دشمن قرار دیا۔

مظاہرین افغانستان کے چند سرحدی قصبوں اور شہروں میں وہاں حال ہی میں سرحد پار سے پاکستانی فوج کی طرف سے کی گئی مبینہ گولہ باری کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔ ان مظاہرین نے یہ الزام بھی لگایا کہ افغانستان کے سابق صدر برہان الدین ربانی کے حالیہ قتل میں بھی پاکستانی فوج کا ہاتھ تھا۔ ان کے مطابق یہ قتل مبینہ طور پر پاکستانی فوج کے خفیہ ادارے آئی ایس آئی کی ملی بھگت سے کیا گیا۔

Afghanistan Staatsbegräbnis für Ex-Präsident Rabbani in Kabul NO FLASH

سابق صدر برہان الدین ربانی کا حالیہ قتل امن کوششوں کے لیے بہت بڑا دھچکہ تصور کیا جا رہا ہے

کابل میں پاکستان کے خلاف آج کے احتجاجی مظاہرے کا پس منظر یہ ہے کہ پاکستان اور افغانستان دونوں کے درمیان کشیدگی کافی زیادہ ہو چکی ہے۔ افغان حکام کی طرف سے بھی یہ الزام لگایا جاتا ہے کہ سابق صدر برہان الدین ربانی کا حالیہ قتل طالبان کی اعلیٰ قیادت اور آئی ایس آئی کی مشترکہ منصوبہ بندی کا نتیجہ تھا۔

کابل میں یہ احتجاجی ریلی ایک گھنٹے تک جاری رہی۔ اس دوران کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہیں آیا۔ تاہم مظاہرین واضح طور پر طیش میں تھے۔ انہوں نے ایسے احتجاجی بینر بھی اٹھا رکھے تھے جن پر لکھا تھا، ‘پاکستان مردہ باد‘، ‘آئی ایس آئی مردہ باد‘۔

اس موقع پر مظاہرین میں سے چند ایک نے غیر ملکی نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا،’’ افغانوں کو اپنے دشمنوں کے خلاف لڑنے کی عادت ہے۔ اب ایک دشمن کے طور پر ہم پاکستان سے لڑ رہے ہیں۔‘‘

 

رپورٹ: عصمت جبیں

ادارت: افسر اعوان

DW.COM