1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

صدر صالح اقتدار اپنے نائب کو منتقل کریں، یمنی اپوزیشن

یمن کی اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد نے صدر علی عبداللہ صالح سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اقتدار اپنے نائب کو منتقل کریں اور تین دہائیوں پر محیط اپنے اقتدار کے خاتمے کا اعلان کریں۔

default

یمن میں اپوزیشن جماعتوں کے مشترکہ فورم کی جانب سے ’’اقتدار کی پرامن اور محفوظ منتقلی کے خاکے‘‘ کے نام سے جاری کردہ بیان میں صدر علی عبداللہ صالح سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ فوری طور پر مستعفی ہو جائیں۔

ملک بھر میں صدر صالح کے خلاف ہونے والے زبردست مظاہروں کے بعد یہ پہلا موقع ہے کہ اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے کوئی واضح اور باقاعدہ مطالبہ سامنے آیا ہے۔ اپوزیشن کا کہنا ہے کہ صدر مستعفی ہو کر اقتدار اپنے نائب منصور ہادی کے سپرد کریں۔

Proteste in Jemen

یمن میں رواں برس جنوری میں مظاہروں کا آغاز ہوا تھا

جنوبی صوبے آبیان سے تعلق رکھنے والے منصور ہادی صدر صالح کی جماعت جنرل پیپلز پارٹی سے وابستہ ہیں۔ اپوزیشن کا مطالبہ ہے کہ منصور ہادی عبوری صدر کی ذمہ داریاں سنبھال کر اپوزیشن کارکنان کے خلاف فورسز کی کارروائیوں کی روک تھام کریں۔ منصور ہادی صدر صالح کے بعد ملک کے سب سے مقتدر شخص سمجھے جاتے ہیں۔

یمن میں رواں برس جنوری میں مظاہروں کا آغاز ہوا تھا اور وہاں اب تک سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں کے نتیجے میں درجنوں افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

اپوزیشن جماعتوں کے طرف سے جاری کردہ اس مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے، ’معاہدہ عبوری صدر کے ساتھ عوامی رائے کے مطابق کیا جائے گا، جس میں یہ طے ہو گا کہ اقتدار کی منتقلی کے عرصے میں انہیں کس قسم کے اختیارات حاصل ہوں گے۔‘

اپوزیشن کی جانب سے یہ مطالبہ بھی کیا گیا ہے کہ ملک میں فوری طور پر قومی حکومت قائم کی جائے، جس کی قیادت اپوزیشن کرے، جبکہ تمام سیاسی جماعتوں کو اس میں شامل کیا جائے۔ اپوزیشن جماعتوں کے ان مطالبات کے جواب میں فی الحال صدر عبداللہ صالح کی طرف سے کوئی ردعمل ظاہر نہیں کیا گیا ہے۔

رپورٹ: عاطف توقیر

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس