1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

صدر زرداری کو فوج سے خطرات لاحق ہیں،برطانوی تھنک ٹینک

برطانیہ کے انٹر نیشنل انسٹیٹیوٹ فار اسٹریٹیجک اسٹڈیز کے مطابق پاکستان کے نو منتخب صدر آصف علی زرداری کو افغانستان کے ساتھ ملحق سرحدی علاقوں میں اسلامی عسکریت پسندی کے خلاف جنگ کو اپنی اولین ترجیح رکھنا ہوگی۔

default

برطانیہ کے انٹر نیشنل انسٹیٹیوٹ فار اسٹریٹیجک اسٹڈیز آئی آئی اس اس نے بین الاقوامی جیو پولیٹیکل سکیورٹی کی سا لانہ جائزہ رپوٹ میں انکشاف کیا ہے کہ پاکستان کے نوء منتخب صدر آصف علی زرداری کو افغانستان کے ساتھ ملحق سرحدی علاقوں میں اسلامی عسکریت پسندی کے خلاف جنگ کو اپنی اولین ترجیح رکھنا ہوگی۔ تاہم یہ بھی کہا گیا ہے کہ صدر زرداری کو فوج کا اعتماد حاصل کرنے کے عمل میں سخت دشواریوں کا سامنا ہوگا۔ اس رپوٹ کے مطابق صدر زرداری کی حکومت کو بالآخر فوج سے خطرات کا سامنا ہوگا۔

Pakistanischer Armeechef Ashfaq Kayani

افواجِ پاکستان کے سربراہ اشفاق پرویز کیانی

لندن کے معروف تھنک ٹینک کے سربراہ جون چپ مین نے سن دو ہزار آٹھ کی اسٹریٹیجک سروے رپوٹ پیش کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی فوج قبائیلی علاقوں میں ایک لاکھ دس ہزار سے زائد فوجیوں کی تعیناتی کے باوجود طا لبان کے خاتمے کے لئے موئثر اقدامات کرنے سے قاصر ہے یا ایسا کرنا ہی نہیں چاہتی۔

Pakistan Präsident Asif Ali Zardari vereidigt

صدرِ پاکستان آصف علی زرداری

امریکی اور افغان اہلکاروں کا کہنا ہے کہ پاکستان کے قبائیلی علاقے القائدہ اور طالبان باغیوں کی جائے پناہ ہیں جو سن دو ہزار ایک میں افغانستان سے طالبان حکومت کے خاتمے کے بعد سے ان باغیوں کے لئے مُقدس خفیہ ٹھکانے کی حیثیت رکھتے ہیں۔

تاہم اسلام آباد نے افغانستان سے ہونے والے امریکی حملوں اور اپنے فضائی حدود کے احترام کی خلاف ورزی سے دفاع کا عہد کر رکھا ہے۔ اور یہ عمل دھشت گردی کے خلاف جنگ کے حلیفوں کے مابین تعلقات میں کشیدگی کا باعث بنا ہوا ہے۔ چپ مین نے صحافیوں کو بیان دیتے ہوئے کہا کہ صدر زرداری کے لئے سب سے بڑا چیلنج فوج کا اعتماد اور سیاسی حلقے سے دھشت گردی اور اسلامی انتہاء پسندی کے خلاف اتفاق رائے حاصل کرنے کا عمل ہوگا۔ دھشت گردی کے خلاف جنگ کو جاری رکھنے کے لئے آصف علی زرداری کو امریکہ کے مفاد کے تحت واشنگٹن کی طرف سے قبائیلی علاقوں میں فوجی حملوں میں تیزی کے لئے دباؤ اور پاکستانی فوج کی جانب سے اس بارے میں تیزی سے بڑھتی ہوئی عدم رواداری کے درمیان ایک توازن قائم کرنا ہوگا۔ برطانوی ماہر چپ مین نے کہا ہے کہ صدر زرداری کو سب سے زیادہ توجہ ملکی اقتصادی بحران کے سبب پیدا ہونے والی داخلہ سیاسی پیچیدگیوں پر دینا ہوگی کیونکہ یہ صورتحال انکی حکومت پر فوج کے حاوی ہونے کا باعث بن سکتی ہے۔