1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

 صحارا، ڈرائیور تارکین وطن کو صحرا کے رحم و کرم پر چھوڑ گیا

عالمی ادارہ برائے مہاجرت کا کہنا ہے کہ ایک سات سالہ بچی سمیت مغربی افریقہ سے تعلق رکھنے والے چوبیس تارکین وطن صحرائے صحارا میں بھٹکتے ہوئے ملے ہیں۔ ان مہاجرین کو اُن کا ڈرائیور صحرا میں چھوڑ کر چلا گیا تھا۔

عالمی ادارہ برائے مہاجرت (آئی او ایم) کے ایک اہلکار نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ یہ مہاجرین نائجر کے شہر اگادیز  سے تین سو کلو میٹر کے فاصلے پر ملے۔ اگادیز کا شہر صحرائے صحارا کے کنارے پر واقع  ہے اور یورپ جانے کے خواہشمند تارکین وطن کا مرکز قرار دیا جاتا ہے۔

سینیگال اور گیمبیا سے تعلق رکھنے والے مہاجرین کے اس گروپ نے بتایا کہ انہیں اُن کا ڈرائیور صحرا میں چھوڑ کر فرار ہو گیا تھا۔ ان تارکین وطن کے مطابق وہ چھ روز تک ڈرائیور کا انتظار کرتے رہے اور پھر انہوں نے مایوس ہو کر دو دن صحرا میں پیدل سفر بھی کیا۔

عالمی ادارہ مہاجرت کے اہلکار کے مطابق مہاجرین کے اس گروہ کو مقامی حکام نے ایک کنویں کے قریب دیکھا اور ادارے کو مطلع کیا۔

تارکین وطن کو بچانے کے لیے امدادی کارروائیاں اور خوفناک حادثات صحارا میں روز مرہ کا معمول ہیں۔ اگادیز کے حکام کی جانب سے جاری کی گئی ایک حالیہ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ سینکڑوں کی تعداد میں مغربی افریقی تارکین وطن یا تو صحرا میں مردہ پائے گئے یا لاپتہ ہو گئے۔ جبکہ متعدد افراد کو امدادی کارروائیوں میں بچایا بھی گیا۔

Symbolbild Flüchtlinge Sahara (imago/CHROMORANGE)

تارکین وطن کو بچانے کے لیے امدادی کارروائیاں اور خوفناک حادثات صحارا میں روز مرہ کا معمول ہیں

آئی او ایم کا کہنا ہے کہ صرف مئی اور جون میں ہی صحرائے صحارا سے باون تارکین وطن کی لاشیں ملی تھیں، جن میں کمسن بچے بھی شامل تھے جبکہ دیگر پچاس مہاجرین اب بھی لاپتہ ہیں اور آئی ایم او کے خیال میں شاید وہ ہلاک ہو چکے ہیں۔

گزشتہ ہفتے یورپی یونین نے نائجیریا کو دس ملین یورو کی رقم بطور امداد دی تھی تاکہ تارکین وطن کے بہاؤ کو لیبیا اور پھر وہاں سے یورپ پہنچنے سے روکا جا سکے۔

 

DW.COM

Audios and videos on the topic