1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

صالح عبدالسلام نے عدالت میں چُپ سادھ لی

پیرس حملوں میں مبینہ طور پر ملوث حملہ آور صالح عبدالسلام کو جمعے کے دن پہلی مرتبہ پیرس کی ایک عدالت میں پیش کیا گیا تاہم اس عدالتی کارروائی میں اس نے بات کرنے سے انکار کر دیا۔

Belgien Zeitung Het Nieuwsblad Salah Abdeslam

پیرس حملوں میں مبینہ طور پر ملوث حملہ آور صالح عبدالسلام نے عدالے کے ساتھ تعاون سے انکار کر دیا ہے

خبر رساں ادارے روئٹرز نے بتایا ہے کہ بیس مئی بروز جمعہ صالح عبدالسلام کو پیرس کی ایک عدالت میں پیش کیا گیا تو اس نے عدالتی کارروائی میں معاونت سے انکار کر دیا۔

عدالتی ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ عدالت نے اپنی کارروائی کو مختصر کر دیا کیونکہ ملزم عدالت میں بات نہیں کرنا چاہتا تھا۔

قبل ازیں صالح کو پیرس کے نواح میں واقع ایک ہائی سکیورٹی جیل سے خصوصی انتظامات کے ساتھ عدالت میں لایا گیا تھا۔ اس موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات بھی کیے گئے تھے۔

فرانسیسی استغاثہ کی طرف سے جاری کردہ بیان کے مطابق، ’’عدالتی کارروائی کے آغاز سے ہی ملزم نے خاموشی اختیار کرنے کا اپنا حق استعمال کیا۔ اس نے عدالتی سوالات کے جواب میں کچھ نہیں کہا۔‘‘

یہ امر اہم ہے کہ صالح کے وکیل نے کہا تھا کہ بیلجیم میں پیدا ہونے والا فرانسیسی شہری صالح عدالت کے ساتھ تعاون کرے گا۔ بیلجیم سے اٹھارہ مارچ کو گرفتار کیا گیا چھبیس سالہ صالح ستائیس اپریل کو بیلجیم سے فرانس منتقل کیا گیا تھا تاکہ اس کے خلاف قانونی کارروائی کی جا سکے۔

صالح پر الزام ہے کہ وہ گزشتہ برس تیرہ نومبر کو پیرس میں ہوئے حملوں میں ملوث تھا۔ ان خونریز حملوں میں 130 افراد لقمہٴ اجل بنے تھے۔ اپنی گرفتاری تک صالح کو یورپ کا مطلوب ترین شخص قرار دیا گیا تھا۔ وہ ان حملوں کے بعد چار ماہ تک فرار رہا تھا۔

Belgien Brüssel Terroranschlag - Gerichtsverhandlung Salah Abdeslam

پیرس کے نواح میں واقع ایک ہائی سکیورٹی جیل سے خصوصی انتظامات کے ساتھ عدالت میں لایا گیا تھا

صالح عبدالسلام پر دہشت گردی کے الزامات عائد کیے گئے ہیں لیکن ابھی تک واضح طور پر معلوم نہیں ہے کہ اس کا پیرس حملوں میں کیا کردار تھا۔ فرانسیسی استغاثہ کا کہنا ہے کہ حملوں کے وقت صالح نے بھی ایک خود کش جیکٹ پہنی ہوئی تھی لیکن آخری لمحات میں اس نے خود کش حملہ کرنے کا ارادہ ترک کر دیا تھا۔

صالح بعد ازاں بیلجیم فرار ہو گیا تھا، جہاں اس نے پہلے بھی اپنی زندگی کا بیشتر وقت گزارا تھا۔ اس کا بڑا بھائی تیرہ نومبر کی رات حملوں کے دوران ہی ایک خود کش کارروائی میں مارا گیا تھا۔

DW.COM