1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

شیر خوار بچوں سمیت درجنوں مہاجرین سمندر میں ڈوب کر ہلاک

اطالوی کوسٹ گارڈ اور امدادی تنظیموں کا کہنا ہے کہ انہیں سمندر میں اٹلی کے ساحلوں کی طرف سفر کرنے والے درجنوں مہاجرین کی لاشیں ملی ہیں۔ ان میں زیادہ تعداد کم سن بچوں کی ہے۔

مشرق وسطٰی اور افریقی ممالک سے تنازعات اور خشک سالی کے نتیجے میں بحیرہ روم کے راستے یورپ کا قصد کرنے والے تارکینِ وطن کے ساتھ پیش آنے والے تازہ سانحے میں درجنوں مہاجرین کے ڈوب کر ہلاک ہونے کی اطلاعات ہیں۔

 سمندر سے مہاجرین کی لاشیں ملنے کی خبر امدادی تنظیم ایم او اے ایس نے دی تھی۔ ایم او اے ایس ایک فلاحی امدادی ادارہ ہے جو ڈاکٹروں کی بین الاقوامی امدادی تنظیم ’ڈاکٹرز وِدآؤٹ بارڈرز‘ کے ساتھ مل کر کام کرتا ہے۔

 دوسری جانب اطالوی کوسٹ گارڈ کا کہنا ہے کہ اسے حالیہ دنوں میں قریب 1700 مہاجرین کو بچانے کے لیے اضافی کمک منگوانا پڑی۔ یہ سترہ سو تارکین وطن 15 چھوٹی چھوٹی کشتیوں میں سوار تھے۔ ایم او اے ایس کے شریک بانی کرس کاٹرامبونے کے مطابق، ’’یہ کسی ڈراؤنی فلم کا سین نہیں بلکہ یورپ کی دہلیز پر رونما ہونے والا حقیقی زندگی کا سانحہ ہے۔‘‘

رواں برس اب تک اٹلی جانے والے اس سمندری روٹ پر 50,000 کے قریب مہاجرین کو بچایا گیا ہے جو سن 2016 کے اسی دورانیے کے مقابلے میں 46 فیصد زیادہ ہے۔  تیرہ سو تارکین وطن تاہم اسی راستے پر اٹلی کی طرف سفر کرتے ہوئے سمندر برد بھی ہو چکے ہیں۔

DW.COM

Audios and videos on the topic