1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شہباز بھٹی کے قتل کی تفتیش جاری

پاکستانی پولیس کے مطابق شہباز بھٹی کے قتل میں ملوث مشتبہ انتہاپسندوں کا پتہ لگانے کی کوششیں جاری ہیں۔ سینئر پولیس اہلکار محمد اسحاق وڑائچ کاکہنا ہے کہ تفتیش کار رات بھر مصروف رہے اور یہ معاملہ جلد ہونے کی امید ہے۔

default

حملے کا نشانہ بننے والی شہباز بھٹی کی گاڑی

خبررساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ایک پولیس اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ تفتیش کار شہباز بھٹی کے حفاظتی دستے کا بھی جائزہ لے رہے ہیں۔

وفاقی وزیر داخلہ رحمان ملک نے کہا ہے کہ اپنی والدہ کے گھر جاتے ہوئے سکیورٹی دستہ ساتھ نہ رکھنے کا فیصلہ شہباز بھٹی کا تھا، کیونکہ وہ اس مقام کو خفیہ رکھنا چاہتے تھے۔ تاہم رحمان ملک نے کہا کہ بھٹی کا یہ فیصلہ درست نہیں تھا۔

اُدھر پاکستان نے وفاقی وزیر برائے اقلیتی امور شہباز بھٹی کے قتل پر تین روزہ قومی سوگ کا اعلان کیا ہے۔ اس دوران سرکاری عمارتوں پر قومی پرچم سرنگوں رکھنے کی ہدایات جاری کی گئی ہیں۔

پاکستان کے وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے شہباز بھٹی کے قتل کے سوگ میں تین روز تک سرکاری عمارتوں پر قومی پرچم سرنگوں رکھنے کی ہدایت جاری کرتے ہوئے کہا، ’ریاست کے مخالف عناصر اہم شخصیتوں کو نشانہ بناتے ہوئے، اپنے ناپاک عزائم پورے کرنے کی آخری کوشش کر رہے ہیں۔‘

شہباز بھٹی کو بدھ کو اسلام آباد میں ان کی والدہ کی رہائش گاہ کے باہر فائرنگ کر کے قتل کر دیا گیا تھا۔ وہ بارہا کہہ چکے تھے کہ القاعدہ اور طالبان عناصر کی جانب سے توہین رسالت کے قانون میں مجوزہ تبدیلی کی حمایت پر انہیں جان سے مارنے کی دھمکیاں مل رہی تھیں۔

Presseschau Mord Shahbaz Bhatti Pakistan

جرمن اخبارات میں شہباز بھٹی کے قتل کی خبر

انہوں نے اس حوالے سے ایک ویڈیو پیغام بھی چھوڑا ہے، جو ریکارڈ تو تقریباﹰ چار ماہ پہلے کیا گیا، لیکن اسے انٹرنیٹ پر یورپی گروپ فرسٹ اسٹیپ فورم نے بدھ کو ہی جاری کیا۔

اس پیغام میں شہباز بھٹی نے آخری دم تک پاکستان میں مظالم کا سامنا کرنے والی اقلیتوں کے تحفظ کے لیے کوششیں جاری رکھنے کا اعلان کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ انتہاپسند انہیں توہین رسالت کے قانون میں مجوزہ تبدیلی کی حمایت پر قتل کرنا چاہتے ہیں۔ ویڈیو پیغام میں بھٹی کا مزید کہنا تھا، ’میں یہ بتانا چاہتا ہوں کہ میرا ایمان یسوع المسیح پر ہے، جس نے ہمارے لیے اپنی جان قربان کی۔‘

خیال رہے کہ توہین رسالت کے متنازعہ قانون پر ہی رواں برس جنوری میں سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کو بھی قتل کر دیا گیا تھا۔

رپورٹ: ندیم گِل/خبررساں ادارے

ادارت: امتیاز احمد

DW.COM